.

امارت دبئی میں بین الاقوامی کمپنیوں کے ملازمین کے لیے پانچ سالہ ویزامتعارف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امارت دبئی نے بین الاقوامی کمپنیوں کے ملازمین کے لیے پانچ سالہ ویزا(انٹری پرمٹ)متعارف کرادیا ہے۔

دبئی کے ولی عہد شیخ حمدان بن محمد نے ٹویٹرپرمنگل کو یہ نیاویزا متعارف کرانے کا اعلان کیا ہے۔انھوں نےایک ٹویٹ میں کہا کہ’’ہمارا مقصد اداروں کوسہولت مہیاکرنا ،ان کی ٹیموں کوسال بھردبئی میں منعقد ہونے والے اجلاسوں، کانفرنسوں اورنمائشوں میں شرکت کے لیے دبئی میں آنے جانے کےقابل بنانا ہے۔‘‘

متحدہ عرب امارات میں رہائش عام طورپرروزگار سے وابستہ ہے،اس نے حالیہ برسوں میں ویزا کے متعدد نئے اختیارات (آپشنز)متعارف کرائے ہیں۔

یواے ای نے 2019ء میں دس سالہ ’گولڈن‘ویزا اوراس سال جنوری میں پانچ سالہ سیاحتی ویزا متعارف کرایا تھا۔

اس کےعلاوہ یواے ای میں 14لاکھ ڈالر(50 لاکھ امارتی درہم) یااس سے زیادہ مالیت کی جائیداد میں سرمایہ کاری کرنے والےافراد پانچ سال کی مدت کے رہائشی ویزے کے اہل ہیں۔ایسےافراد کے لیےشرط یہ ہے کہ انھوں نے جائیداد خرید کررکھی ہواورانھیں کم سے کم تین سال تک اس کا مالک ہونا چاہیے۔

ایسے کاروباری افراد جن کا کم ازکم سرمایہ 136,000 ڈالر(500,000 امارتی درہم) ہے، یا جو کسی تسلیم شدہ کاروباری ادارے کا حصہ ہیں،وہ چھے ماہ کا ویزاحاصل کر سکتے ہیں۔اس ویزے کی مزید چھے ماہ کی مدت کے لیے تجدید کی جاسکتی ہے۔

سیکنڈری اسکول میں 95 فی صدسے زیادہ نمبر یا 3.75 یا اس سے زیادہ گریڈ پوائنٹ اوسط (جی پی اے) والےغیر معمولی طلبہ پانچ سالہ ویزے کے اہل ہیں اوراپنے اہل خانہ کی کفالت کرسکتے ہیں۔