.

سنہ 2022ء کے اوائل میں چاند کے مدار کا چکر لگانے کی سعی کریں گے: ایلون مسک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

معروف امریکی صنعتکار ایلون مسک کا کہنا ہے کہ ان کی کمپنی اسپیس ایکس کی جانب سے تیار کردہ راکٹ اگلے سال کے اوائل میں چاند کے مدار کا چکر لگانے کے کوشش کرے گا۔

ایلون مسک نے امریکا کی نیشنل اکیڈمیز اسپیس اسٹڈی بورڈ کے اجلاس کے موقع پر کہا کہ "ہم دسمبر میں کچھ ٹیسٹ مکمل کریں گے جس کے بعد حتمی فلائٹ جنوری میں لانچ کی جائے گی۔"

مسک کا کہنا تھا کہ "پہلی فلائٹ میں بہت سے خطرات درپیش ہوں گے جن کے سبب کامیابی کے امکانات کم ہیں مگر مجھے امید ہےکہ ہمیں چاند پر انسان کی دوبارہ واپسی کے مشن میں خاطر خواہ کامیابی دیکھنے کو ملے گی۔"

اسپیس ایکس کے راکٹ اسٹار شپ نے اس سے قبل زمین کے مدار میں متعدد چکر کامیابی سے لگائے ہیں۔ کئی ناکام کوششوں کے بعد اسپیس ایکس کی تکنیکی ٹیم نے کامیابی کے ساتھ اسٹار شپ کو مشن کی تکمیل کے بعد دوبارہ واپس اتار لیا تھا۔

امریکی صنعتکار کے مطابق "رواں سال کے آخر تک امریکی انتظامیہ سے خلائی مشن کی اجازت لے لی جائے گی۔

ایلون مسک کے مطابق کامیاب پرواز کی صورت میں جنوری کی کامیابی کی صورت میں 2022 کے دوران ایک درجن یا اس سے زائد خلائی مشن مکمل کئے جائیں گے۔

امریکی اسپیس ایجنسی ناسا نے اپنے آرٹیمس پروگرام کے تحت اسپیس ایکس کے اسٹار شپ راکٹ کو چنا ہے کہ 2025 تک انسان کی چاند پر واپسی کو ممکن بنایا جا سکے۔

مگر ایلون مسک کے خیال کے مطابق وہ دنیا کا سب سے بڑا راکٹ تیار کر یں گے جو کہ کہیں زیادہ تعداد میں لوگوں کو نظام شمسی کے کسی بھی مقام تک لے جانے کے قابل ہوگا۔"

ان کا کہنا تھا کہ زمین سے انسانوں کی ہجرت اور دوسرے سیاروں پر رہائش کو یقینی بنانے کے لئے میرے خیال میں ہمیں 1000 بڑے راکٹوں کا استعمال کرنا پڑے گا۔