.

بھارتی حکومت کسان تحریک کے مطالبات ماننے پر مجبور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی نے اعلان کیا ہے کہ ان کی حکومت نے زراعت کے متنازعہ قانون کو واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ بھارت میں موجود کسان اس قانون کے خلاف گزشتہ ایک سال سے زائد عرصے سے احتجاج کر رہے تھے۔

وزیر اعظم مودی نے قوم سے خطاب میں اعلان کیا کہ "آج میں تمام بھارت کو یہ بتانے آیا ہوں کہ ہم نے زراعت کے تین قوانین کو واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔"

بھارتی وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ "رواں ماہ میں ہونے والے پارلیمانی سیشن کے دوران حکومت قوانین کی واپسی کا عمل مکمل کر لے گی۔"

قوم سے خطاب میں مودی نے کہا کہ حکومت کی کسانوں، خاص طور پر چھوٹے کسانوں، کو مضبوط کرنے کی کوششوں کے باوجود کسان ان قوانین سے مطمئن نہیں ہیں، اس لیے حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ انہیں ختم کر دیا جائے۔

بھارت میں پنجاب، ہریانہ اور اترپردیش کے کسان پچھلے ایک سال سے ان قوانین کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں۔