.

حوثی ملیشیا سفارت خانہ خالی کرے، تمام یمنی ملازمین کو فوری رہا کرے: امریکی وزیر خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ اینٹنی بلنکن کا کہنا ہے کہ امریکا صنعاء میں حوثیوں کے ہاتھوں امریکی سفارت خانے کے یمنی ملازمین کی گرفتاری کی مذمت کرتا ہے اور ان افراد کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتا ہے۔

جمعے کے روز جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ایران کے اتحادی حوثیوں کی جانب سے درجنوں یمنی شہریوں اور ان کے گھر کے افراد کو گرفتار کیا گیا اور ناروا سلوک کا نشانہ بنایا گیا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ مذکورہ یمنی شہری 2015ء میں امریکی سفارت خانہ بند ہونے کے بعد سے وہاں عارضی طور پر کام کر رہے تھے۔

بلنکن نے واضح کیا کہ حوثیوں کو چاہیے کہ وہ تمام یمنی ملازمین کو بنا کوئی ایذا پہنچائے فوری طور پر رہا کریں اور سفارت خانے کا کمپاؤنڈ خالی کر کے ضبط کی گئی املاک واپس لوٹائیں۔

ادھر یمن کے لیے امریکی ایلچی ٹیم لینڈرکنگ نے صنعاء میں حوثیوں کی جانب سے امریکی سفارت خانے خلاف ورزی کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔ ان کا کہنا ہے کہ یمنی ملازمین کی حراست کو قبول نہیں کیا جا سکتا۔

عالمی سلامتی کونسل نے بھی جمعرات کے روز بھرپور انداز سے یمن میں ایرانیوں کے دست راس حوثیوں کی جانب سے صنعاء میں امریکی سفارت خانے پر دھاوے اور درجنوں یمنی ملازمین کی گرفتاری کی مذمت کی۔ سلامتی کونسل نے تمام ملازمین کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا۔

یاد رہے کہ حوثی ملیشیا نے چند روز قبل صنعاء میں امریکی سفارت خانے کے کمپاؤنڈ پر دھاوا بول دیا تھا۔ یہ دھاوا چند ہفتے قبل سفارت خانے کے متعدد مقامی ملازمین اور پہرے داروں کے اغوا کے بعد سامنے آیا۔ مقامی ذرائع کے مطابق حوثیوں نے سفارت خانے کی عمارت کے اندر بڑے پیمانے پر لوٹ مار کی۔