.

مصر:اعضا کی غیرقانونی پیوند کاری میں ملوث گینگ گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری سیکیورٹی سروسز نے ایک ایسے گروہ کو پکڑا ہےجو ڈاکٹروں، نرسوں اور ملازمین کے نیٹ ورک کے ذریعے انسانی اعضاء کی چوری کے 100 سے زیادہ واقعات کو انجام دے چکا ہے۔

’’عوامی فنڈز کے جرائم اور منظم جرائم کا مقابلہ کرنے" کے شعبے میں "محکمہ برائے غیر قانونی نقل مکانی اور انسداد انسانی اسمگلنگ" نے انکشاف کیا کہ پولیس نے تین ڈاکٹروں، ایک کڈنی انسٹیٹیوٹ ملازم،نجی لیبارٹری کے ایک ملازم اور ایک نجی اسپتال کی نرس سمیت 10 کو گرفتار کیا ہے۔ یہ گینگ انسانی اعضا کی تجارت اور گردوں کی غیرقانونی طریقے سے پیوند کاری میں ملوث رہا ہے۔

اس گینگ نے سوشل میڈیا پر پوسٹ کیے گئے اشتہارات کے ذریعے اپنے اعضاء عطیہ کرنے کے خواہشمند لوگوں سےرابطے کیے اور انہیں 20 ہزار سے 30 ہزار مصری پاؤنڈز کے عوض گردے کی خرابی کے شکار مریضوں میں سے ایک گردہ منتقل کرنے پر آمادہ کیا۔

بدلے میں، گینگ نے عطیہ کرنے والے شخص سے بڑی رقم حاصل کی جن میں سے کچھ کی رقم ایک چوتھائی ملین مصری پاؤنڈ بنتی تھی۔

گینگ کے ارکان نے عطیہ دہندگان کے طبی تجزیے اور ریڈیولاجیکل معائنے بھی تیارکیے جن کے گردے کے عطیہ کے آپریشن کرنے میں رکاوٹیں تھیں۔ تاکہ وہ اعضاء کی پیوند کاری کی منظوری حاصل کرنے کے لیے متعلقہ حکام کے پاس جمع کرا سکیں۔