کرونا وائرس

امریکا: کرونا وائرس کے علاج کے لئے نئی گولی کی منظوری کی سفارش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی محکمہ صحت کے ایک پینل نے مرک فارماسوٹیکل کمپنی کی کرونا وائرس کے علاج کے لئے بنائی جانے والی گولی کو منظور کرنے کی سفارش کر دی ہے۔

امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کے ماہرین کے ایک پینل نے گولی کے فوائد اور نقصانات پر بحث کے بعد اس گولی کے حق میں 10 کے مقابلے میں 13 ووٹوں سے سفارش پیش کر دی۔ اس گولی کو حاملہ خواتین کے استعمال کے لئے مضر قرار دیا گیا ہے جس کے لئے سفارشات پیش کی گئی ہیں۔

امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ انتظامیہ اس پینل کی سفارشات پر عمل کرنے کی پابند نہیں ہے مگر قوی امکان یہی ہے کہ امریکی ڈرگ اتھارٹی اور محکمہ صحت خصوصی ہدایات کے ساتھ رواں سال کے آخر تک اس گولی کے استعمال کی منظوری دے دیں گے۔

امریکی پینل نے اس سفارش سے قبل اپنی ملاقات میں گولی کے ممکنہ اثرات پر گھنٹوں بحث کی۔ گولی سے علاج کے حامی ماہرین کے مطابق اس گولی کو حاملہ خواتین استعمال نہ کریں اور ڈرگ انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ دوائی کو خاص ہدایات کے ساتھ جاری کریں۔

پینل نے گولی کو ان بالغ افراد کے لئے تجویز کرنے کا مشورہ جنہیں کرونا وائرس کے کم اور درمیانے درجے خطرات کا سامنا ہے۔ اس کے علاوہ بزرگ افراد، موٹاپا اور دمے کے مریضوں کے لئے بھی اس دوائی کو فائدہ مند قرار دیا گیا ہے۔ اکثر ماہرین کے مطابق اس دوائی کو غیر ویکسین شدہ افراد کو تجویز نہیں کیا جانا چاہیے ہےکیونکہ دوائی کے ٹرائل کے دوران ان افراد کو تحقیق میں شامل نہیں کیا گیا۔ اس گولی کی ان پر افادیت یا نقصان کا فی الوقت کوئی اندازہ نہیں ہے۔

مرک فارماسوٹیکل کمپنی کے مطابق اس گولی کو کرونا وائرس کے نئے تغیر 'اومیکرون' کے مقابل میں آزمایا نہیں گیا مگر اس سے کرونا کی دیگر اقسام سے کسی حد تک بچائو ممکن ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں