اسٹیفنی ولیمز لیبیا میں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کی خصوصی مشیر مقرر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کے اعلان کے مطابق امریکی سفارت کار اسٹیفنی ولیمز کو لیبیا میں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کی خصوصی مشیر کے طور پر مقرر کیا گیا ہے۔ وہ اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی برائے لیبیا یان کوبش کی جگہ لیں گی۔ کوبش نے نومبر کے اواخر میں اچانک اپنے عہدے سے استعفا دے دیا تھا۔

اسٹیفنی روانی سے عربی زبان بولتی ہیں۔ انہوں نے 2020ء میں عارضی طور پر جنیوا میں اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی برائے لیبیا کے منصب پر کام کیا تھا۔ اسٹیفنی نے لیبیا میں کئی مرتبہ امن عمل کی پیش رفت کے سلسلے میں حصہ لیا۔

اسٹیفنی کو اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل جیسے اختیارات حاصل ہوں گے۔ لہذا انہیں خصوصی ایلچی کے منصب کے برخلاف سلامتی کونسل کے پندہ رکن ممالک کی سرکاری منظوری کی ضرورت نہیں ہو گی۔

واضح رہے کہ لیبیا میں صدارتی انتخابات کے لیے 24 دسمبر کی تاریخ مقرر ہے۔

ادھر اقوام متحدہ کے ترجمان اسٹیفن ڈوجارک کا کہنا ہے کہ اسٹیفنی ولیمز کا دفتر طرابلس میں ہو گا ، وہ آئندہ چند روز میں اپنا کام شروع کر دیں گی۔

اقوام متحدہ کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ اسٹیفنی ولیمز لیبیائی ، علاقائی اور بین الاقوامی فریقوں کے ساتھ مل کر ثالثی کی کوششوں کی قیادت کریں گی۔ ان کوششوں کا مقصد لیبیا میں سیاسی ، سیکورٹی اور اقتصادی شعبوں میں مکالمے کا سلسلہ جاری رکھنا اور صدارتی و پارلیمانی انتخابات کے انعقاد کو آسان بنانا ہے۔

یان کوبش
یان کوبش

یاد رہے کہ سلواکیہ سے تعلق رکھنے والے یان کوبش نے 17 نومبر کو غیر متوقع طور پر اپنا استعفا اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس کو پیش کیا تھا۔ وہ رواں سال جنوری سے لیبیا میں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کے خصوصی ایلچی کے طور پر کام کر رہے تھے۔ گوٹیرس نے 23 نومبر کو کوبش کا استعفا منظور کر لیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں