ایران کے ساتھ جوہری مذاکرات کا انجام نہیں جانتے: پینٹاگان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی محکمہ دفاع ’پینٹاگان‘ نے کہا ہے کہ ایران کے ساتھ ویانا میں ہونے والے جوہری مذاکرات کا انجام معلوم نہیں۔ پینٹاگان کا کہنا ہے کہ ایران اپنے میزائل پروگرام کو ترقی دے رہا ہے جو خلیج میں میری ٹائم نیویگیشن کو خطرہ لاحق ہے۔

پینٹاگان نےزور دے کر کہا کہ ایران عراق اور شام میں دہشت گرد گروہوں کی حمایت جاری رکھے ہوئے ہے۔ ایران نے حالیہ برسوں میں اپنے ڈرون کو بہت زیادہ استعمال کیا ہے۔ تہران کا میزائل اور ڈرون سسٹم زیادہ خطرناک ہوگیا ہے۔

اس کے علاوہ انہوں نے نشاندہی کی کہ ایران کے ساتھ جوہری مذاکرات مشکل مرحلے سے گزر رہے ہیں۔ ہم اس کے انجام کو نہیں جانتے۔ خطے کے اتحادی ایران کے رویے اور اقدامات پر فکر مند ہیں۔

"ایرانی میزائل امریکی مفادات کے لیے خطرہ ہیں"

منگل کو امریکی محکمہ دفاع کے ترجمان، جان کربی نے کہا تھا کہ ایران کے بیلسٹک میزائل پروگرام سے امریکی مفادات کو خطرہ ہے۔

کربی نے ایک پریس کانفرنس میں مزید کہا کہ ایران نے اپنے بیلسٹک میزائل تیار کیے ہیں جس سے امریکی تشویش بڑھ گئی ہے اور اس سے نمٹنے کی ضرورت ہے۔

کوئی سنجیدہ مذاکرات نہیں

جوہری پہلو میں یورپی سفارت کاروں نے کہا کہ یورپی فریق اب تک ایران کے ساتھ سنجیدہ مذاکرات میں شامل نہیں ہوسکے ہیں اور ایران کا موقف جوہری معاہدے کی بحالی کی کوششوں سے ہم آہنگ نہیں ہے۔

ایرانی جوہری مذاکرات کےگرد امیدوں کے معدوم ہونے کے ساتھ ساتھ واشنگٹن نے سفارتی طریقے ناکام ہونے کی صورت میں پچھلے کچھ دنوں میں میز پر موجود دیگر آپشنز کی طرف اشارہ کیا ہے۔

امریکا کے پاس متبادل آپشن

اس تناظر میں امریکی سینٹرل کمانڈ کے کمانڈر کینتھ میکنزی نے زور دے کر کہا کہ ان کے ملک کے پاس ایران کو روکنے کے لیے بہت متنوع اور مضبوط فوجی آپشنز موجود ہیں۔

فرانس، برطانیہ اور جرمنی کے سینیئر سفارت کاروں نے پیر کے روز کہا کہ مغربی طاقتوں کو ابھی تک ایران کے ساتھ 2015 کے جوہری معاہدے کو بچانے کے لیے حقیقی مذاکرات میں شامل ہونا باقی ہے۔ یہ کہ جب تک تیزی سے پیش رفت نہیں ہوئی یہ معاہدہ جلد ہی "بے معنی" ہو جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں