گروپ چارکا سوڈان میں سیاسی معاہدے کا خیرمقدم، انتخابات کے جلد انعقاد کا مطالبہ

مظاہرے سوڈانی عوام کےجمہوری انتقالِ اقتدارکے عزم کی گہرائی کوظاہرکرتے ہیں:گروپ چار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا،سعودی عرب، برطانیہ اورمتحدہ عرب امارات پر مشتمل گروپ چارنے جمعرات کوایک مشترکہ بیان میں سوڈان کی فوج اور سویلین حکومت کے درمیان گذشتہ ماہ طے شدہ معاہدے کا خیرمقدم کیا ہے۔

سوڈان سے متعلق گروپ چارنے کہا کہ مظاہرین کو تشدد سے بچانا ترجیح رہنا چاہیے۔قبل ازیں اس نے25 اکتوبرکو سوڈان میں جنرل عبدالفتاح البرہان کے زیرقیادت فوجی بغاوت کے فوری بعد سویلین قیادت والی حکومت کی فوری بحالی کا مطالبہ کیا تھا۔

انھوں نے کہا کہ ہم سوڈانی عوام کے لیے اپنی اجتماعی اور انفرادی حمایت اور جمہوری، مستحکم اورپُرامن ملک کے لیے ان کی امنگوں کی تائید کا اعادہ کرتے ہیں۔ملک میں جاری مظاہرے سوڈانی عوام کے جمہوریت کی جانب منتقلی کےعزم کی گہرائی کو ظاہرکرتے ہیں۔چاروں ممالک نے کہاکہ سوڈانی عوام کوتشدد سے بچانا ترجیح رہنا چاہیے۔

گروپ چار نے واضح کیا کہ گذشتہ ماہ نگران وزیراعظم عبداللہ حمدوک اور فوج کے درمیان معاہدہ سوڈان کی جمہوریت کی طرف منتقلی کا صرف’’پہلاقدم‘‘تھا۔اس معاہدے کے نتیجے میں فوج نے نظربند وزیراعظم عبداللہ حمدوک کورہا کردیا تھا اورانھیں ٹیکنوکریٹس پرمشتمل نئی حکومت تشکیل دینے کی دعوت دی تھی۔

چاروں ممالک نے دست خط کنندگان پر زور دیا ہے کہ وہ سیاسی معاہدے میں کیے گئے وعدوں کو ایفاء کری۔انھوں نے اس حوالے سے سیاسی قیدیوں کی حالیہ رہائی کا خیرمقدم کیا ہے اورمظاہرین کے خلاف تشدد کے ذمے داروں کا احتساب یقینی بنانے کے لیے تحقیقاتی کمیٹی کے قیام کو سراہا ہے۔

انھوں نے مستقبل قریب میں ہنگامی حالت کے نفاذ کے خاتمے اور2023ء کے آخریا2024ء کے اوائل میں انتخابات کے انعقاد کے لیے ایک لائحہ عمل پیش کرنے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، امریکا اور برطانیہ سوڈان میں جمہوری انتقالِ اقتدارکے لیے کام کرنے والے تمام افراد کی حمایت کا اعادہ کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں