یوکرین پر کوئی بھی حملہ روس کو بہت مہنگا پڑے گا : یورپی یونین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یورپی یونین نے باور کرایا ہے کہ یوکرین کے ساتھ سرحد پر روسی عسکری وجود میں اضافہ حملے کے نئے اندیشوں کو ہوا دے رہا ہے۔

یونین نے خبردار کیا ہے کہ یوکرین پر کسی بھی حملے کی روس کو بھاری قیمت چکانا پڑے گی۔ یہ موقف یورپی یونین کے خارجہ امور کے نمائندے جوزپ بوریل اور یوکرین کے وزیر خارجہ دمتری کولیبا کے درمیان ٹیلی فون پر رابطے میں سامنے آیا۔ گفتگو میں یوکرین کے گرد روسی افواج کے اکٹھا ہونے کی روشنی میں مشرقی یورپ کی سیکورٹی صورت حال زیر بحث آئی۔

اس موقع پر بوریل نے باور کرایا کہ یوکرین کی خود مختاری اور اس کی اراضی کی سلامتی کے واسطے یورپی یوین کی ٹھوس حمایت جاری رہے گی۔

ادھر برطانوی خاتون وزیر خارجہ لیز ٹریس نے جمعرات کے روز یوکرین اور نیٹو کے حوالے سے کرملن ہاؤس کے "جارحانہ اور معاندانہ بیان" کی مذمت کی۔ تاہم ساتھ ہی انہوں نے ماسکو کی جانب سے مکالمے کے اجرا کی نیت رکھنے کا خیر مقدم کیا۔

ٹریس نے باور کرایا کہ یوکرین کے ساتھ سرحد پر روس کی فوجی کمک میں اضافہ ناقابل قبول امر ہے۔

روس کے صدر ولادی میر پوتین
روس کے صدر ولادی میر پوتین

یاد رہے کہ روسی صدر ولادی میر پوتین نے جمعرات کے روز اپنی پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ یوکرین کے حوالے سے مغربی روس کا بحران حل کرنے کے لیے روسی تجاویز پر امریکی رد عمل "مثبت" ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں