کرونا وائرس

بیلجیئم کے معروف "کک باکسنگ" چیمپئن کی کرونا ویکسین لگوانے سے انکار موت کا سبب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یورپ میں کرونا ویکسین کو مسترد کرنے اور کرونا کے وجود سے انکار کرنے والا شخص اسی وبا سےمتاثر ہونے کے بعد انتقال کرگیا۔

بیلجیئم کے معروف "کک باکسنگ" چیمپئن فریڈرک سنسٹرا کی موت صرف 41 سال کی عمر میں کووِڈ کے انفیکشن سے ہوئی۔اس نے اینٹی ویکسین لینے سے انکار کر دیا تھا اور کہا تھا کہ کرونا وبا کی کوئی حقیقت جہیں۔

برطانوی اخبار "ڈیلی میل" کی طرف سے شائع کردہ رپورٹ "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کے مطالعے سے گذری ہیں۔ ان میں بتایا گیا ہےکہ فوت ہونے والا ہیرو "انڈر ٹیکر" کے نام سے جانا جاتا تھا۔ اسے بیماری لاحق ہوئی تو اسپتال لایاگیا مگر اس نے مسلسل کرونا کے وجود سے انکار کیا اور اسپتال سے واپس جانے کی کوشش کی۔ اس نے ویکسین لگوانے کی اجازت بھی نہیں دی۔

فریڈرک سنسٹرا بیلجیئم میں وائرس سے متعلق پیچیدگیوں کی وجہ سے انتقال کر گئے۔ اسپتال سے گھر جانے کے چند ہفتوں بعد اس نے اپنے دوستوں اور مداحوں کو بتایا کہ وہ اپنی علامات کا علاج گھر پر کریں گے۔

عالمی چیمپئن کو نومبر کے آخر میں اس وقت اسپتال لے جایا گیا جب ان کے کوچ نے انہیں طبی امداد لینے پر مجبور کیا اور ناک میں آکسیجن ٹیوب کے ساتھ انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں بستر پر لیٹے ہوئے اپنی تصاویر شائع کیں۔

سنسٹرا نے فیس بک پر ایک ویڈیو بھی پوسٹ کی جس میں وہ سانس لینے میں دشواری کا شکار نظر آئے۔ ساتھ والے تبصرے میں لکھا کہ اس کے پاس سست لوگوں کے ساتھ ضائع کرنے کا وقت نہیں ہے۔

سنسٹرا نے حکومتی پابندیوں کی مذمت کی تھی جس کا مقصد کرونا وائرس پر قابو پانا تھا۔ اس نے وائرس کو بھی مسترد کر دیا اور کہا کہ "چھوٹا وائرس" انہیں ہسپتال میں رہتے ہوئے سوشل میڈیا پر لکھنا جاری رکھنے سے نہیں روک سکے گا۔

سنسٹرا 13 دسمبر تک انٹرنیٹ پر سرگرم تھے لیکن 15 دسمبر کو دل کا دورہ پڑنے سے ان کا انتقال ہو گیا۔

26 نومبر کو سنسٹرا نے اعلان کیا کہ 4 دسمبر کو شیڈول میچ منسوخ کر دیا گیا ہے لیکن کہا کہ وہ "ناخوش" ہیں کہ اسے منسوخ کر دیا گیا ہے۔

سنسٹرا نے لکھا کہ ایک جنگجو دستبردار نہیں ہوتا۔ میں مضبوطی سے واپس آؤں گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں