ایران کا طالبان وزیرخارجہ کے دورے کے موقع پرافغان فنڈز جاری کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران نے طالبان کے وزیرخارجہ کے دورے کے موقع پرامریکا سے افغانستان کے فنڈز جاری کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔طالبان انتظامیہ کے قائم مقام وزیرخارجہ ملّا امیرخان متقی نے اپنے ایرانی ہم منصب حسین امیرعبداللہیان سے ملاقات کی ہے۔

انھوں نے افغانستان کے مالی اثاثوں کو انسانی مقاصد کے لیے جاری کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔امریکا اوردوسرے یورپی ممالک نے طالبان کے افغانستان میں برسراقتدار آنے کے بعد سے یہ اثاثے روک رکھے ہیں۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے پیر کے روز کہا کہ ان کا ملک ہمسایہ افغانستان میں طالبان کے اقتدار کوسرکاری طور پرتسلیم تونہیں کرتا لیکن ایرانی وزیر خارجہ نے افغانستان کے اثاثے منجمد کرنے پرامریکا کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔انھوں نے کہا کہ ان اثاثوں کو انسانی مقاصد اور افغانستان میں لوگوں کے حالات زندگی کی بہتری کے لیے استعمال کیا جانا چاہیے۔

ایرانی وزیرخارجہ نے کہا کہ غیّورافغان قوم کی لڑائی نے یہ ظاہرکیا ہے کہ کوئی غیرملکی طاقت افغانستان پرتادیر قبضہ نہیں کر سکتی اور نہ وہاں حکومت کرسکتی ہے۔

سخت گیرطالبان نے 15 اگست کوافغانستان پردوبارہ کنٹرول حاصل کرلیا تھا اور اپنی حکومت قائم کرلی تھی۔ امریکا اور اس کے اتحادی ممالک کی افواج 20 سال کی موجودگی کے بعد ملک سے دستبردارہو گئی تھیں اور ان کے حمایت یافتہ صدر اشرف غنی کابل سے راہ فراراختیار کرگئے تھے جس کے ساتھ ہی ان کے زیرقیادت انتظامیہ کا سقوط ہوگیا تھا۔

اس کے بعد سے غیرملکی حکومتوں نے طالبان کی نئی حکومت کو باضابطہ طور پر تسلیم کرنے سے گریز کیا ہے۔اب بھی وہ طالبان کی حکومت تسلیم کیے بغیرافغانستان کو معاشی بحران سے دوچار ہونے سے بچانے کے لیے کوشاں ہیں۔

تاہم امریکا نے بعض دیگرمغربی حکومتوں کی حمایت سے بیرون ملک پڑے افغان مرکزی بنک کے اربوں کے اثاثےروک رکھے ہیں اور بعض طالبان لیڈروں پرپابندیوں کو برقراررکھا ہے جس سے جنگ زدہ ملک کا بنک کاری کا شعبہ مفلوج ہو کررہ گیا ہے اورمعاشی تباہی میں تیزی آئی ہے۔

پاکستان سمیت بعض ہمسایہ ممالک عالمی برادری سے مطالبہ کررہے ہیں کہ وہ سخت موسم سرما میں افغانستان میں رونماہونے والے انسانی بحران سے نمٹنے کے لیے اقدامات کرے اور مقہورافغانوں کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر خوراک اور امدادی سامان بھیجے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں