.

قازقستان میں پرتشدد احتجاج پر 9900 افراد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قازقستان کی وزارت داخلہ کے مطابق پچھلے ہفتے کے دوران پرتشدد احتجاج میں ملوث 9 ہزار 900 افراد کو گرفتار کیا جاچکا ہے۔

یہ خبر ایسے وقت سامنے آئی ہے کہ جب قازق صدر قاسم جومارت توقاییف پارلیمنٹ سے خطاب میں نئے وزیر اعظم کو نامزد کریں گے۔ صدر قاسم نے دارالحکومت نور سلطان اور اس کے گرد و نواح میں پرتشدد احتجاج کو بغاوت کی ناکام کوشش قرار دیا تھا۔

قازقستان میں ایندھن کی قیمتیں بڑھنے کے سبب ہونے والے مظاہروں نے اس وقت پر تشدد رخ اختیار کر لیا جب شرکاء نے سرکاری عمارتوں کو نقصان پہنچایا۔

توقاییف کے مطابق پرتشدد مظاہرین میں مشرق وسطیٰ اور افغانستان سمیت دیگر علاقائی ممالک کے باشندے بھی شامل تھے۔

احتجاج کے دوران توقاییف نے کابینہ کو تحلیل کرتے ہوئے متعدد سیکیورٹی عہدیداروں کو بغاوت کے الزام میں عہدوں سے ہٹاتے ہوئے گرفتار کر لیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں