.

ایران کے ساتھ بات چیت میں پیش رفت سے خلیجی شراکت داروں کو آگاہ کیا ہے: امریكا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزارت خارجہ نے باور کرایا ہے کہ واشنگٹن اپنے شراکت داروں کے ساتھ مل کر ایک معاہدے تک پہنچنے پر کام کر رہا ہے جس کے ذریعے ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکا جا سکے۔

وزارت خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے العربیہ ڈاٹ نیٹ/الحدث کو دیے گئے بیان میں کہا کہ "ہم ایران کے ساتھ بات چیت میں کسی بھی پیش رفت سے خلیجی ممالک میں اپنے شراکت داروں کا مطلع کر رہے ہیں"۔

ترجمان کے مطابق جوہری معاہدے سے علاحدگی نے ایران کو آزادی دے دی اور وہ زیادہ دشمنی پر اُتر آیا۔

ایک مغربی سفارت کار نے بدھ کے روز انکشاف کیا کہ ایرانی جوہری معاہدے کے حوالے سے ویانا بات چیت کی آخری تاریخ یکم فروری ہے۔

اسی طرح وائٹ ہاؤس کے منصوبوں سے مطلع دو ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کے نزدیک ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کی بحالی کے لیے جاری ویانا مذاکرات کے حوالے سے ایک حتمی فیصلے تک پہنچنے میں محض چند "ہفتے" باقی ہیں۔ یہ بات انگریزی ویب سائٹ axios نے بتائی۔

مذکورہ ذرائع کے مطابق بائیڈن انتظامیہ نے فیصلہ کرنے کے لیے جنوری کے اواخر یا فروری کے اوائل کو حتمی وقت متعین کیا ہے۔

یاد رہے کہ تہران اپریل 2021ء سے ویانا میں بڑی طاقتوں کے ساتھ بات چیت میں مصروف ہے۔ اس کا مقصد اپنے جوہری پروگرام کے ھوالے سے 2015ء میں طے پانے والے معاہدے کو بحال کرنا ہے۔

امریکا جو مئی 2018ء میں یک طرفہ طور پر معاہدے سے علاحدہ ہو گیا تھا ،،، وہ اس بات چیت میں بالواسطہ طور پر شریک ہے۔ اب تک بات چیت کے 8 ادوار ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں