امریکا اور اسرائیل میں ایران کے ساتھ مذاکرات میں ناکامی کے منظر ناموں پر بات چیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے اتوار کو کہا کہ انہوں نے گذشتہ ماہ کے آخر میں تل ابیب کے دورے کے دوران سینیئر اسرائیلی حکام سے ایران کے ساتھ سفارت کاری کی ناکامی کے منظر ناموں پر تبادلہ خیال کیا تھا۔

انہوں نے ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکنے کے لیے واشنگٹن کے اصرار پر زور دیتے ہوئے کہا کہ "وقت ختم ہو رہا ہے۔"

25 دسمبر کو امریکی "ایگزیس" ویب سائٹ نے 4 سینئر اسرائیلی عہدیداروں کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا کہ قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے اسرائیلی حکام کے ساتھ ملاقاتیں کی ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ امریکی حکام نے نے یہ یقین دلایا کہ امریکا ایران کے بارے میں سخت موقف اختیار کرنے کے لیے تیار ہے۔ اگر ایران کے ساتھ تہران کے جوہری پروگرام پر بات چیت ناکام ہوتی ہے تو امریکا متبادل آپشنز استعمال کرے گا۔

ان عہدیداروں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کی اور کہا کہ سلیوان نے ملاقاتوں میں ایران کے جوہری پروگرام کے حوالے سے تین ممکنہ قریب المدتی منظر ناموں کا خاکہ پیش کیا۔

پہلا منظر نامہ 2015 کے جوہری معاہدے کی مکمل تعمیل پر واپس آنے کے لیے آنے والے ہفتوں کے اندر ایک معاہدے کی نمائندگی کرتا ہے۔ سلیوان نے کہا کہ انہیں شبہ ہےکہ ایران سابقہ معاہدے کی شرائط پر واپس نہیں آئے گا۔

پابندیوں کا پابندیوں سے مقابلہ

دوسرا منظر نامہ ایران کو اپنے جوہری پروگرام کو مزید تیز کرنے سے روکنے کے لیے عارضی "پابندیاں" ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ تیسرا منظر نامہ کسی معاہدے تک نہ پہنچنا اور ایران پر نئی پابندیاں اور دباؤ ڈالنا ہے۔

امریکی ویب سائٹ نے کہا کہ ویانا میں جوہری مذاکرات کی بحالی کے ساتھ ہی اسرائیلی وزیر اعظم کے دفتر کے اندر بائیڈن انتظامیہ کے اس خیال کے بارے میں تشویش بڑھ رہی تھی کہ وہ ایک جزوی معاہدہ کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

اسرائیل کا انکار

اسرائیلی حکام کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ "منجمد بہ مقابلہ منجمد‘‘ کے لیے ایک معاہدے کے خیال پر سلیوان کی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ، وزیر خارجہ وزیر خارجہ یائر لپیڈ اور وزیر دفاع بینی گینٹز کے ساتھ ملاقاتوں کے دوران تبادلہ خیال کیا گیا۔ ان میں سے سبھی نے سلیوان کو مطلع کیا کہ وہ اس طرح کے اقدام کی مخالفت کریں گے۔

ایک اسرائیلی اہلکار کا کہنا تھا کہ ’’اس طرح کا معاہدہ ایران کو یورینیم کی افزودگی کو ہتھیاروں کے درجے تک کرنے سے روک سکتا ہے‘‘۔

لیکن انہوں نے مزید کہا کہ لیپڈ نے سلیوان کو بتایا کہ اسرائیل پہلے ہی ایسا کام کر رہا ہے جیسے ایران کے پاس 90 فیصد افزودہ یورینیم ہے اور ہم نہیں سمجھتے کہ ایسا نہ کرنے پر اسے ادائیگی کرنے کی کوئی ضرورت ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں