’ماں کے اشکوں نے بیٹے کو پھانسی کے پھندے سے بچا لیا‘

جج کا ملزم کو ماں کی قدم بوسی کا حکم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایک مصری ماں کے آنسوؤں نے اپنے بیٹے کو پھانسی سے پھندے سے بچالیا۔ ملزم پر وراثت کی وجہ سے اپنی بہن کو جلا کر قتل کرنے کا الزام لگایا گیا تھا۔

تفصیلات میں منصورہ کی فوجداری عدالت نے کل سوموار کو دقہلیہ کے علاقے کفرالکردی میں وراثت کی وجہ سے بہن کو جلا کر قتل کرنے والے ملزم کو پھانسی کی بجائے پھانسی کے بجائے اس کی سزائے موت کو عمر قید میں تبدیل کردی۔

عدالت میں پیشی کے موقعے پر ملزم کی ماں نے جج سے روتے ہوئے کہا کہ وہ پہلے اپنی بیٹی کو کھو چکی ہیں۔ اب وہ اپنا بیٹا نہیں کھونا چاہتی۔

ماں کی قدم بوسی

جب کہ والدہ نے جج کے سامنے کھڑے ہو کراپنے شہری حقوق سے دستبرداری کا اعلان کیا۔ عدالت نے مدعا علیہ کو کٹہرے سے ہٹانے کا حکم دیا اور اسے حکم دیا کہ وہ اپنی ماں کے ہاتھ، سر اور پاؤں کو چومے کیونکہ اس نے اسے پھانسی سے بچایا۔

پبلک پراسیکیوشن نے 47 سالہ محمد زکریا محرز جو ایک سپر مارکیٹ کے مالک اور کفر الکردی - دقہلیہ کے رہائشی ہیں کو گذشتہ اکتوبر میں اپنی بہن وداد زکریا محرز محمد عوف کے سوچے سمجھے قتل کے لیے فوجداری عدالت میں ریفر کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں