مشکیزوں سے کولروں تک‘ مسجد نبوی میں زم زم کی فراہمی کا سفر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مسجد نبوی میں زم زم کی فراہمی کی تاریخ اتنی ہی پرانی ہے جتنی کہ مسجد نبوی کی تاریخ ہے۔ ماضی میں زم زم کی فراہمی کے لیے مختلف طریقے اختیار کیے جائیں گے۔

مسجد نبوی میں زم زم کی فراہمی کا عمل باقاعدہ ایک پیشہ ہے۔ یہ پیشہ نسلوں سے جاری رہا اور مدینہ منورہ کے باسی اس کار خیر میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے۔ وہ چشموں اور کنوں سے پانی اٹھاتے اور مسجد نبوی اور روضہ رسول ﷺ پرآنے والے عاشقان رسول کی پیاس بجھاتے۔

مسجد نبوی اور مدینہ منورہ کی تاریخ کے ماہر انجینیر حسان طاہر نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ ماضی میں مسجد نبوی میں پانی کی فراہمی کےلیے مختلف روایتی طریقے استعمال کیے جاتے تھے۔ چونکہ پانی مدینہ منورہ کے کنووں سے لایا جاتا تھا۔ اس لیے ساقی حضرات مشکیزوں میں پانی بھر کر مسجد نبوی میں لاتے۔

مسجد بنوی میں نماز آب زم زم سے پیاس بجھا رہا ہے
مسجد بنوی میں نماز آب زم زم سے پیاس بجھا رہا ہے

عہد نبوی میں مٹی کے برتنوں یا مشکیزوں کے ذریعے مسجد نبوی میں پانی لایا جاتا۔ اموی دور میں الزرقا چشمے سے لانے کا منصوبہ بنایا گیا۔ اس کا پانی ایک چھوٹی نہر کے ذریعے مسجد نبوی کے باب السلام تک لایا گیا۔ بعد ازاں نمازیوں کے لیے آب رسانی کے مراکز اور جگہیں مختص کی گئیں۔

تاریخ میں ’سقایہ‘ کے مراحل

انجینیئر حسان طاہر نے کہا کہ مسجد نبوی میں لائے جانے والے پانی کو ٹھنڈا رکھنے کے لیے انہیں برتنوں میں رکھا جاتا۔ پانی کو سفید رنگ کے رمالوں سے ڈھانپا جاتا اور اس کے بعد مسجد نبوی میں موجود نمازیوں اور زائرین کو تقسیم کیا جاتا۔

انہوں نے بتایا کہ مسجد نبوی میں پانی کی فراہمی کے پیشے یعنی السقایہ سے وابستہ افراد اپنے مخصوص لباس سے پہچانے جاتے تھے۔ ان کے لباس کو’البقشہ‘ کہا جاتا۔

سعودی مملکت میں السقایہ

مدینہ منورہ کے مورخ نے موجودہ آل سعود کے دور میں ’سقایہ‘ پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ سعودی دور حکومت میں مملکت کے بانی شاہ عبدالعزیز آل سعود سے آج تک ہر فرمانروا نے سقایہ کو غیر معمولی اہمیت دی۔

مملکت حرمین شریفین میں آنے والے اللہ کے مہمانوں کی راحت وآرام اور ان کی سہولت کے لیے ہرممکن سہولت فراہم کرنے کے عزم پر کام کر رہی ہے۔

زمزم

صدارت عامہ برائے امور حرمین شریفین کی زم زم کی فراہمی کی ذمہ دار ایجنسی نےمسجد نبوی میں پانی کے 27 ہزار گیلن فراہم کیے ہیں۔ مسجد نبوی اور روضہ رسول ﷺ پر زم زم کے لیے 8 ہزار کولر فراہم کیے ہیں۔ ان میں کچھ کولروں میں ٹھنڈا اور کچھ میں گرم پانی رکھا جاتا ہے۔

مسجد بنوی میں رکھے آب زم زم کے کولر
مسجد بنوی میں رکھے آب زم زم کے کولر

انتظامیہ نے مسجد نبوی میں زم زم کی فراہم کی کے لیے ’زمزم مبارک یونٹ‘ قائم کیا ہے۔ مسجد نبوی میں 90 میٹر پر مشتمل پانی کی ایک ٹینکی بنائی گئی ہے جس میں ایک لاکھ 20 ہزار گیلن کی گنجائش ہے۔ 180منٹ میں یہ پانی ٹھنڈا کر لیا جاتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں