یمن اور حوثی

عرب اتحاد نے حوثیوں کے زیرانتظام جیل میں’ہلاکتوں کی اطلاعات‘کوبے بنیاد قرار دے دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عرب اتحاد نے یمن کی گورنری صعدہ میں واقع ایک حراستی مرکز میں فضائی حملے میں قیدیوں کی ہلاکتوں سے متعلق پھیلائے گئے عووں اور اطلاعات کوبے بنیاد قرار دے کرمسترد کردیا ہے۔

عرب اتحاد کے ترجمان بریگیڈیئرجنرل ترکی المالکی نے ہفتے کے روز سعودی عرب کی سرکاری پریس ایجنسی (ایس پی اے) کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ حوثی ملیشیا کے حملیے اور ہلاکتوں سے متعلق دعوے بالکل بے بنیاد اور من گھڑت ہیں۔

جمعہ کو متعدد ذرائع ابلاغ نے یہ دعویٰ کیا تھا کہ عرب اتحاد نے ایران کی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا کے زیرانتظام ایک جیل پرفضائی حملہ کیا ہے جس کے نتیجے میں متعدد قیدی ہلاک ہوگئے ہیں۔

تاہم ان اطلاعات کے منظرعام پر آنے کے بعد عرب اتحاد نے اپنے داخلی طریق کار کے مطابق ’’بعد ازکارروائی واقعہ کا جامع جائزہ‘‘ لیا ہے اور اس کے نتائج کی روشنی میں حوثیوں کےدعوے کو ’’بے بنیاد‘‘قراردیا ہے۔

عرب اتحاد حالیہ مہینوں میں یمن میں حوثیوں کے جائز فوجی اہداف کے خلاف حملے کررہا ہے اور شہریوں کو خبردار کررہا ہے کہ وہ پہلے سے نشانہ بنائے گئے مقامات کے قریب جائیں اور نہ ہی کسی جگہ اکٹھے ہوں۔

اتحاد نے واضح کیا ہے کہ یمن میں حوثیوں کی کارروائیاں بین الاقوامی انسانی قوانین کے مطابق کی جاتی ہیں۔بیان میں کہا گیا ہے:’’یمن میں اقوام متحدہ کے رابطہ دفتر برائے انسانی امور(او سی ایچ اے) کے ساتھ متفقہ طریق کار کے مطابق زیربحث ہدف کو نواسٹرائیک لسٹ (این ایس ایل) میں نہیں رکھا گیا ہے۔اس کی اطلاع بین الاقوامی ریڈ کراس کمیٹی (آئی سی آر سی) نے بھی نہیں دی ہے اور وہ جنیوا کنونشن (سوم) کے آرٹیکل 23 میں بیان کردہ حراستی مراکز سے متعلق بین الاقوامی انسانی قانون کے قواعد کی پاسداری نہیں کرتا ہے اور نہ وہاں جنگی قیدیوں کا علاج کیا جاتا تھا جس کے پیش نظر ایسے مقامات کے لیے مخصوص علامات لگائی جاتی ہیں اورحملوں کی روک تھام کے اقدامات کیے جاتے ہیں‘‘۔

ترجمان نے یہ بھی واضح کیا کہ داخلی تحقیقات کے نتائج کا او سی ایچ اے اور آئی سی آر سی کے ساتھ تبادلہ کیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں