طالبان وفد کی مذاکرات کے لیے پہلی بار ناروے کے دارلحکومت اوسلو آمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

طالبان کے ترجمان کے مطابق طالبان کا ایک وفد ہفتے کے روز مغربی سفارت کاروں اور افغان سول سوسائٹی کے نمائندوں کے ساتھ تین روزہ بات چیت کے لیے ناروے پہنچا ہے۔ وفد کو توقع ہے کہ وہ ملک میں جاری "جنگی ماحول کو بدلنے" کی کوشش کریں گے۔

ناروے کی حکومت کا چارٹرڈ طیارہ ہفتے کی شام اوسلو کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر اترا جس میں طالبان کے 15 ارکان سوار تھے۔ کابل سے آنے والے وفد کی سربراہی وزیر خارجہ امیر خان متقی کر رہے ہیں۔

حقوق انسان

توقع ہے کہ بات چیت میں انسانی حقوق، انسانی امداد اور افغان مرکزی بینک کے فنڈز کو ڈی ریگولیشن سے متعلق امور پر توجہ دی جائے گی۔

طالبان کی اقتدار میں واپسی کے بعد افغانستان میں انسانی صورتحال نے ایک المناک صورت حال اختیار کی ہے۔ امریکا نے افغان مرکزی بینک کے 9.5 بلین ڈالر کے اثاثے منجمد کر دیے جو کہ 2020 میں افغانستان کی مجموعی قومی پیداوار کے نصف کے برابر ہے۔

بات یہیں نہیں رکی کیوں کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ اور ورلڈ بینک نے ایک ایسے ملک میں اپنی سرگرمیاں معطل کر دیں جس کی معیشت بین الاقوامی حمایت پر مبنی تھی کیونکہ یہ قومی بجٹ کے 80 فیصد کے برابر تھی۔

طالبان وفد طیارے کے اندر
طالبان وفد طیارے کے اندر

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے ’اے ایف پی‘ کو بتایا کہ تحریک نے مغربی دنیا کے مطالبات کو پورا کرنے کے لیے اقدامات کیے ہیں اور ہمیں امید ہے کہ سفارت کاری کے ذریعے تمام ممالک بشمول یورپی ممالک اور عمومی طور پر مغرب کے ساتھ تعلقات مضبوط ہوں گے۔

انہوں نے اپنی امید کا اظہار کیا کہ یہ مذاکرات پچھلی جنگ کے ماحول کو امن میں تبدیل کرنے میں مدد دیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں