یمن کی سرکاری فوج ایک ہفتے کے اندر مارب میں 30 کلومیٹر اندر داخل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کی آئینی حکومت کی وفادار فوج کے تھرڈ بٹالین کے کمانڈر میجر جنرل منصور ثوابہ نے کہا ہے کہ فوج اور عوامی مزاحمتی قوتوں نے اتحادی طیاروں کی مدد سے گذشتہ ہفتے کے دوران مارب گورنری کے جنوب میں لڑائی کے محاذوں پر بڑی پیش قدمی کی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یمن کی سرکاری فوج ایک ہفتے کے دوران مآرب کے جنوب میں تیس کلومیٹر اندر داخل ہو گئی ہے۔

میجر جنرل ثوابہ نے جنوبی محاذ کے اگلے مورچوں سے ایک اخباری بیان میں کہا کہ فوج اور مزاحمت کے ہیروز نے دہشت گرد حوثی ملیشیا کے قبضے سے 30 کلومیٹر سے زیادہ کے بڑے علاقے کو آزاد کرا لیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ گذشتہ چند دنوں کے دوران فوج اور مزاحمتی فورسز نے ایرانی ملیشیا کے دفاعی خطوط پر دھاوا بولا اور بارودی سرنگوں سے نمٹا۔ اس دوران ہماری فوج الردھہ، ملعا اور ام ریش کی جانب پیش قدمی کرتے ہوئے جنوبی محاذوں کو فتح کررہی ہے۔

تھرڈ بٹالین کے کمانڈر نے تصدیق کی کہ فوج کے ہیروز کی لڑائیوں، مزاحمتی قوتوں، جائنٹس بریگیڈز [العمالقہ] اور اتحادی طیاروں کے فضائی حملوں نے ایرانی ملیشیا کو بھاری جانی اور مالی نقصان سے دوچار کیا ہے۔

مارب گورنری کے جنوب میں گھمسان کی جنگ

یمنی فوج، العمالقہ اور عوامی مزاحمت کے دستوں نے کل ہفتے کے روز مارب گورنری کے جنوب میں فوجی آپریشن کےدوباہ شروع کیا۔ بعض مقامات پر گھمسان کی جنگ کی اطلاعات ہیں۔ ایرانی حوثی ملیشیا کو شکست دینے کے لیے لڑائی جاری ہے۔

مسلسل لڑائی میں ملیشیا کو ہونے والے انسانی اور مادی نقصانات اور اس کے ارکان کے بڑے پیمانے پر فرار کے درمیان جائنٹس بریگیڈز حریب اور الجوبہ اضلاع کے درمیان بہت سے علاقوں کو آزاد کرانے میں کامیاب ہو گئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں