یوکرین پرحملہ: پے پال نے روس میں اپنی خدمات بندکردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بین الاقوامی سطح پررقوم کی ادائی کرنے والی کمپنی پے پال ہولڈنگز نے ہفتے کے روز روس میں ’’موجودہ حالات‘‘ کے پیش نظراپنی خدمات بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔اس نے کہا ہے کہ وہ یوکرین پر حملے کے بعد روس میں اپنا کام بند کررہی ہے۔اس طرح پے پال (PayPal)بھی ان بہت سی مالیاتی اور ٹیکنالوجی کمپنیوں میں شامل ہوگئی ہے جنھوں نے روس کی جارحیت کے بعد سے اپنی کاروباری سرگرمیاں معطل یا مکمل بند کردی ہیں۔

پے پال کے صدر اور چیف ایگزیکٹو ڈان شلمین نے ہفتے کے روزایک بیان میں کہا کہ ’’موجودہ حالات میں ہم روس میں اپنی خدمات معطل کر رہے ہیں‘‘۔انھوں نے مزید کہا کہ کمپنی یوکرین میں روس کی پرتشدد فوجی جارحیت کی مذمت میں عالمی برادری کے ساتھ کھڑی ہے۔

کمپنی کے ترجمان نے واضح کیا ہے کہ ’’ہم ایک مخصوص مدت کے لیےرقم نکلوانے کی معاونت کریں گے اور اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ اکاؤنٹ بیلنس(کھاتوں کی رقوم) قابل اطلاق قوانین اور ضوابط کے مطابق تقسیم ہوں‘‘۔

پے پال نے گذشتہ بدھ کو روس میں صارفین کی جانب سے سرحد پارلین دین کی اجازت دی تھی،البتہ ملک میں نئے صارفین کو قبول کرنا بندکردیا تھا۔

یوکرین کے سرکاری حکام جنگ کے آغاز کے بعد سے پے پال سے مطالبہ کررہے تھے کہ وہ روس میں کام بند کردے اوراس کے بجائے رقوم اکٹھا کرنے میں ان کی مدد کریں۔

پے پال نے جمعہ کو ایک بیان میں کہا تھا کہ’’اس نے یوکرین پرحملے کے بعد ہنگامی حالات میں کام کرنے والے خیراتی اداروں کے لیے پندرہ کروڑ ڈالر سے زیادہ کی رقم اکٹھا کرنے میں مدد کی ہے اوریہ اس مختصر مدت میں ہماری بڑی کوششوں میں سے ایک ہے‘‘۔

روس میں پے پال کی معطلی کا اطلاق اس کے رقم کی منتقلی کے ٹول ژوم پر بھی ہوتا ہے۔اس سے قبل اس کی حریف دو کمپنیوں ’وائز‘ اور ’ریمٹلی‘ نے روس میں کچھ خدمات معطل کردی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں