روس اور یوکرین

روس کی بحران کے حل کے لیے روسی اور یوکرینی صدور سے ملاقاتیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ نے ہفتے کے روز ماسکو میں روسی صدر ولادیمیر پوتین سے کریملن میں تین گھنٹے تک ملاقات کی۔ اس کے بعد بینیٹ واپس آئے اور یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی سے بات کی۔

بینیٹ کے ترجمان کے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم نے کچھ دیر قبل روسی صدر ولادیمیر پوتین سے ملاقات کے بعد یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی سے بات کی تھی۔

امریکی Axios ویب سائٹ کے مطابق معلومات کے مطابق پوتین کے ساتھ اپنی ملاقات کے دوران اسرائیلی وزیر اعظم نے یوکرین میں جنگ بندی کی کوششوں پر بات کی۔

یوکرین کی درخواست پر ثالثی

انہوں نے مزید کہا کہ ماسکو میں اسرائیلی ثالثی یوکرین کے صدر کی درخواست پر ہوئی۔

بعد ازاں بینیٹ ماسکو میں پوتین سے ملاقات اور زیلنسکی سے بات کرنے کے بعد جرمنی روانہ ہوگئے۔

قابل ذکر ہے کہ العربیہ/الحدث کے ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ بینیٹ کی پوتین کے ساتھ ملاقات 3 گھنٹے جاری رہی اور تل ابیب نے اسرائیلی وزیر اعظم کے ماسکو کے دورے سے قبل امریکہ، فرانس اور جرمنی کے ساتھ رابطہ کیا تھا۔

اسی دوران اسرائیلی وزارت خارجہ نے روس میں موجود اپنے شہریوں سے فوری طور پر نکل جانے پر زور دیا۔

یہ ثالثی اس وقت ہوئی جب کیف نے اعلان کیا کہ روس اور یوکرین کے درمیان مذاکرات کا تیسرا دور اگلے پیر کو ہوگا جس کا مقصد لڑائی کو روکنا ہے۔ پچھلے دو دوروں کے بعد جو یوکرین- بیلاروس اور یوکرین- ہنگری کی سرحدوں پر منعقد ہوئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں