جدید ٹکنالوجی والا ترقی یافتہ ملک جہاں ایک پتھر ٹوٹ جانے سے خوف پھیل گیا!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جاپان میں گذشتہ روز سے ذرائع ابلاغ اور سوشل میڈیا پرSessho-seki (قاتل پتھر) کا چرچا ہو رہا ہے۔ یہ پتھر گذشتہ ہفتے ایک روز ٹوٹ کر دو حصوں میں تقسیم ہو گیا تاہم اس کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی۔

جاپان کے شہرTochigi کے قریب معروف پہاڑی علاقے میں پیش آنے والے اس واقعے نے جدید ٹکنالوجی کے ملک میں توہم پرستی پر مبنی تبصروں کا دروازہ کھول دیا ہے۔ اس حوالے سے یہ بات مشہور ہو رہی ہے کہ اس پتھر میں ایک "بد روح" مقیم تھی جس کے سبب یہ ٹوٹ گیا۔ یہ روح ایک عورت کی تھی جس نے جاپانی شہنشاہ Toba کے قتل کی خفیہ سازش میں شرکت کی تھی۔ یہ شہنشاہ 1156ء میں 53 برس کی عمر میں مر گیا تھا۔ جاپانی مفروضے کے مطابق اس عورت کے مرنے کے بعد اس کی روح پھر سے مجسم حالت میں ایک اژدھے کی شکل میں واپس آ گئی۔

جاپانی میڈیا میں یہ بات دہرائی جا رہی ہے کہ پتھر کے ٹوٹنے کا واقعہ شاید دانستہ طور پر واقع ہوا تا کہ اس میں مقیم بد روح کو نکال دیا جائے۔ یہ فعل بدھ مت کے ایک روحانی عامل نے انجام دیا۔

ادھر جاپانی اخبارShimotsuke Shimbun کے مطابق اس پتھر سے زہریلی گیس نکلنا شروع ہو گئی ہے اور جو کوئی بھی اس کو چُھوئے گا وہ ہلاک ہو جائے گا۔

اس "قاتل پتھر" کے جائے وقوع کے علاقے میں حقیقی خوف اور دہشت پائی جا رہی ہے۔ ٹویٹر پر جاری اس پتھر کی تصویر کو 1.7 لاکھ Likes مل چکے ہیں۔

اخبار کے مطابق حکومتی ذمے داران دیگر اہم شخصیات کے ساتھ مل کر جلد ہی اس پتھر کے انجام کے حوالے سے بات چیت کریں گے۔ توقع ہے کہ حکام اس پتھر کے دونوں حصوں کو دوبارہ سے جوڑ کر پرانی حالت میں لے آئیں گے تا کہ بد روح کو اس کے اندر قید کیا جا سکے اور وہ "جدید ٹکنالوجی" والے اس ترقی یافتہ ملک کے لوگوں کو کوئی ضرر نہ پہنچا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں