روس اور یوکرین

روس کا یوکرینی پناہ گزینوں کے لیے اپنے ملک کی راہ داریاں کھولنے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

انٹرفیکس نیوز ایجنسی نے جمعرات کو روسی وزارت دفاع کا حوالہ دیتے ہوئے رپورٹ کیا ہے کہ روسی وزارت دفاع ہر روز ماسکو کے وقت کے مطابق صبح 10 بجے روس میں یوکرینی باشندوں کے انخلاء کے لیے انسانی بنیادوں پر راہداری کھولے گی۔

یوکرین کی حکومت نے اس تنازعے سے قبل ماسکو کی طرف سے اسی طرح کی پیشکش کو مسترد کر دیا تھا۔ امریکی وزیر خارجہ انٹنی بلنکن نے بدھ کے روز رائیٹرز کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یوکرین سے روس تک انسانی ہمدردی کی راہداری بنانے کی روسی تجاویز "مضحکہ خیز" تھیں۔

مشرقی یوکرین میں علیحدگی پسندوں کی پیش قدمی

ایک اور پیشرفت میں روسی وزارت دفاع کے ترجمان میجر جنرل ایگور کوناشینکوف نےکہا کہ جمہوریہ ڈونیٹسک کی افواج نے روسی فائر کوریج کے تحت ماریانووا، لازاریوکا اور لیسنوئے کے قصبوں کو کیف فورسز سے آزاد کرا لیا ہے۔

صحافیوں کو ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ "روسی افواج نے 10 کلومیٹر گہرائی تک پیش قدمی کی اور سٹیپنو، کراپوینٹسکو، مائنر کریمچک، نوو پیٹریوکووا اور یالینسکوئے کے قصبوں کو اپنے کنٹرول میں لے لیا۔"

انہوں نے مزید کہا کہ آج تک ہم نے 2,998 فوجی مقامات کو تباہ کیا ہے اور ہماری فضائیہ نے 68 فوجی مراکز کو تباہ کیا ہے جن میں کیف افواج کی دو کمانڈ پوسٹیں، 12 لاجسٹک سائٹس اور 3 طیارہ شکن میزائل گاڑیاں شامل ہیں۔

انہوں نے کہ روسی فضائی دفاعی نظام نے "Bayraktar PT2" کے MiG-29 اور تین بغیر پائلٹ طیاروں کو تباہ کر دیا اور یوکرین کے Tochka-U ٹیکٹیکل میزائل کو مار گرایا۔"

روسی فوجی آپریشن کے آغاز سے لے کراب تک یوکرینی افواج کے نقصانات میں 98 طیارے، 110 ڈرون، 144 طیارہ شکن میزائل پلیٹ فارم، 88 ریڈار سائٹس، 1007 ٹینک اور دیگر بکتر بند گاڑیاں، 109 میزائل لانچر، 374 توپ خانے، اور 793 فوجی گاڑیاں شامل ہیں۔

کیف کی آدھی آبادی کی نقل مکانی

کیف کے میئر وٹالی کلِٹسکو نے جمعرات کو بتایا کہ 24 فروری کو یوکرین میں روسی فوجی آپریشن کے آغاز کے بعد سے یوکرین کے دارالحکومت کی نصف آبادی فرار ہو چکی ہے۔

یوکرینی ٹیلی ویژن نے کلِٹسکو کے حوالے سے کہا کہ ہماری معلومات کے مطابق کیف کی آدھی آبادی شہر چھوڑ چکی ہے۔آج 20 لاکھ سے کم لوگ وہاں موجود ہیں۔

کیف کے علاقے کے گورنر اولیکسی کولیبا نے مقامی ٹیلی ویژن کو بتایا کہ بدھ کو کیف کے آس پاس کے دیہاتوں اور شہروں سے دس ہزار سے زیادہ لوگوں کو نکالا گیا ہے۔

برطانوی وزارت دفاع کا نے آج کہا کہ یوکرین کے دارالحکومت کیف کے شمال مغرب میں روسی افواج کے بہت بڑے قافلے نے ایک ہفتے سے زیادہ عرصے میں بہت کم پیش قدمی کی ہے اور اس کا نقصان جاری ہے۔

وزارت دفاع نے ایک بیان میں کہا کہ ہلاکتوں میں اضافے کے ساتھ روسی صدر ولادیمیر پوتین نقصانات کی تلافی کے لیے روسی مسلح افواج اور دیگر کی مختلف شاخوں کی افواج استعمال کرنے پر مجبور ہوں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں