متحدہ عرب امارات توانائی کی ضمانت کے لیے روس سےتعاون کا خواہاں ہے: وزیرخارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

متحدہ عرب امارات کے وزیر خارجہ شیخ عبداللہ بن زاید آل نہیان نے کہا ہے کہ ان کا ملک عالمی توانائی کی سکیورٹی کو بہتربنانے کے لیے روس کے ساتھ تعاون کا خواہاں ہے۔

یوکرین پر روس کے حملے کے ردعمل میں مغربی ممالک نے ماسکو کے خلاف پابندیوں عایدکردی ہیں اوراس سے توانائی کی عالمی منڈیوں میں خلل پڑاہے اور صارفین اب روس کی تیل اور گیس کی برآمدات کی جگہ متبادل رسد تلاش کررہے ہیں۔

اماراتی وزیرخارجہ نے جمعرات کو اپنے روسی ہم منصب سرگئی لافروف کے ساتھ ماسکو میں مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا کہ توانائی اور خوراک کی منڈیوں کے استحکام کو برقرار رکھنا ضروری ہے۔

انھوں نے کہا کہ ہم یوکرین بحران کے حل کے لیے ثالثی کی تمام کوششوں کا خیرمقدم کرتے ہیں اور متحدہ عرب امارات پرامن حل کے مواقع سے فائدہ اٹھانے کے لیے فریقین کے ساتھ بات چیت کوتیار ہے۔

واضح رہے کہ متحدہ عرب امارات نے یوکرین حملے کی مذمت میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں حال ہی میں پیش کردہ قراردادپررائے شماری میں حصہ نہیں لیا تھا۔روس نے اس قرارداد کو ویٹو کردیا تھا۔

اوپیک کے رکن ممالک سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات نے اب تک تیل کی قیمتوں پرقابو پانے میں مدد کے لیے امریکا کے مطالبات کی مزاحمت کی ہے اور اپنی اضافی پیداواری صلاحیت کواستعمال نہیں کیا۔ وہ اوپیک پلس کے تحت تیل کی یومیہ پیداوار سے متعلق معاہدے کی پاسداری کے لیے پرعزم ہیں۔اوپیک پلس میں روس کی قیادت میں بعض غیراوپیک ممالک بھی شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں