متحدہ عرب امارات کا مال بردارجہاز ایران کی عسلویہ بندرگاہ سے 30 میل دورڈوب گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

متحدہ عرب امارات کا ایک مال بردار جہاز جمعرات کو ایران کی عسلویہ بندرگاہ سے 30 میل دورڈوب گیا ہے۔اس کے عملہ کے 16 ارکان کو بچا لیا گیا ہے۔

اس سے قبل عملہ کے قریباً 30 ارکان کے پانی میں ہونے کی اطلاع ملی تھی ۔انھوں نے زندگی بچانے والی جیکٹیں پہن رکھی تھیں اوروہ امدادی رضاکاروں کے منتظر تھے۔

ایران کی نیم سرکاری خبررساں ایجنسی تسنیم نے اطلاع دی ہے کہ تیز ہواؤں کی وجہ سے خلیج میں طوفان آیا ہے اور بحری جہازوں کی نقل وحرکت اور بحری سرگرمیوں میں خلل پڑا ہے۔

سالم المکرانی کارگوکمپنی کے آپریشن مینجرکیپٹن نزار قدورا نے امریکی خبررساں ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) سے گفتگو میں تصدیق کی ہے کہ السالمی 6 جہازایران کی ساحلی حدود میں ڈوب گیا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ امدادی رضاکاروں نے عملہ کے 16ارکان کو بچا لیا ہے۔مزید11 افراد اجتماعی کوشش میں بچ نکلنے میں کامیاب ہوگئے ہیں جبکہ ایک شخص کو قریبی ٹینکر نے بچا لیا تھا۔عملہ کے دو ارکان اب بھی پانی میں تھے۔

کپتان قدورا نے مزید بتایا کہ عملہ میں سوڈان، بھارت، پاکستان، یوگنڈا، تنزانیہ اور ایتھوپیا کے شہری شامل تھے۔یہ جہازعراق کے جنوبی شہراُم قصر کی بندرگاہ کی جانب جا رہا تھا اور اس پرکاریں اور دیگر سامان لدا ہوا تھا۔

السالمی 6کی مالک دبئی میں قائم کمپنی نے فوری طور پرحادثے پر کوئی تبصرہ کرنے سے انکارکیا ہے۔ایران کی سرکاری خبررساں ایجنسی ایرنا اور سرکاری ٹیلی ویژن کی جانب سے جاری کردہ تصاویرالسالمی 6 سے مشابہ ہیں۔

واضح رہے کہ خلیج عرب بین الاقوامی تجارت کی ایک اہم بڑی آبی گزرگاہ ہے۔اس سے دنیا بھر کو جانے والے مال بردارجہاز ہوکرگذرتے ہیں اور خلیجی عرب ریاستوں سے تیل بردار ٹینکر گذرکر دوسرے ملکوں میں جاتے ہیں۔

اس آبی گزرگاہ میں مال بردارجہازوں کے ڈوبنے کے واقعات ناقابل یقین حد تک شاذونادر ہی پیش آتے ہیں۔تاہم موسم سرما کے نسبتاً سرد مہینوں سے موسم گرما کے جھلسا دینے والےدنوں کی آمد آمد ہے اور اس تبدیلی کی وجہ سے پورے خطے کودھول کے طوفانوں اور خراب موسم نے اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے۔

ایران کے محکمہ موسمیات نے بدھ سے خلیج عرب میں شدیدموسم کے آغاز کی خبر دی ہے اور اس نے خبردار کیا ہے کہ ہوا کے زوردارجھونکوں سے خلیج میں جہازرانی کی سرگرمیاں درہم برہم ہوجائیں گی اور ہفتے تک آف شور تنصیبات کو نقصان پہنچ سکتاہے جبکہ ایران کے صوبہ بوشہر میں آندھی کی رفتار70 کلومیٹر فی گھنٹا (40 میل فی گھنٹا) سے تجاوز کرسکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں