ایرانی دہشت گرد حکومت کے خلاف پابندیاں اٹھانا خطرناک ہے: سینیٹر جانسن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی سینیٹر رون جانسن نے ایرانی دہشت گرد حکومت کے ساتھ جوہری معاہدے کی طرف واپسی کے خلاف خبردار کرتے ہوئے اسے ایک خوفناک معاملہ قرار دیا ہے۔ ان کا مزید کہا کہ ایرانی حکومت ایک "بری حکومت ہے جو ایٹمی بم حاصل کرنے کی طرف بڑھ رہی ہے۔ "

جانسن نے کہا کہ امریکی صدر جو بائیڈن کی "کمزوری" کے "سنگین اثرات" ہو سکتے ہیں۔

سینیٹر جانسن نے امریکی "فاکس نیوز" کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ اس خوفناک جوہری معاہدے میں شامل ہونے کے لیے بائیڈن انتظامیہ کی ایران واپسی کے باوجود ایرانیوں نے امریکیوں سے ملنے سے انکار کر دیا۔ اس لیے اندازہ لگائیں کہ ایران کے نئے معاہدے پر کون مذاکرات کر رہا ہے۔ امریکہ روس اور چین کر رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم اس معاہدے کے بارے میں جو کچھ سنتے ہیں وہ یہ ہے کہ یہ خوفناک ہے۔ پچھلے معاہدے سے کہیں زیادہ بدتر ہے اور ایسا لگتا ہے کہ اربوں ڈالر یرغمال بنانے والوں کے حوالے کر دیے جائیں گے۔ جس کی وجہ سے مزید یرغمال بنائے جائیں گے۔ دنیا دہشت گردوں کے خلاف پابندیاں اٹھانے سے ایران کو بالآخر ایٹمی ریاست بننے سے نہیں روکا جا سکے گا۔

جانسن نے مزید کہا کہ مُجھے شک ہے کہ اس معاہدے سے ایران کے بم کے حصول میں تاخیر ہو جائے گی کیونکہ میں صرف ان معاہدوں کی تاثیر پر یقین نہیں رکھتا جو کیے جائیں گے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایرانی حکومت جوہری طاقت کی طرف بڑھ رہی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ یہ ایک بری حکومت، ایک بری سلطنت ہے اور ہمیں طاقت کے ساتھ ان سے نمٹنے کی ضرورت ہے نہ کہ اس بدصورت کمزوری کے ساتھ جس پر بائیڈن انتظامیہ ایران کے ساتھ عمل کر رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں