یمن اور حوثی

یمن میں متحارب فریقوں کا دو ماہ کی جنگ بندی پراتفاق: اقوام متحدہ ایلچی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی نے جمعہ کو اعلان کیا ہے کہ متحارب فریقوں نے دو ماہ کی جنگ بندی سے اتفاق کیا ہے۔اس کا آغاز اسی اختتام ہفتہ سے ہوگا۔

انھوں نے کہا کہ فریقین نے یمن کے اندر اور اس کی سرحدوں کے پار تمام جارحانہ فوجی فضائی، زمینی اور بحری کارروائیوں کو روکنے سے اتفاق کیا ہے۔

اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی ہانس گرنڈبرگ نے ایک بیان میں کہا کہ فریقین خطے میں پہلے سے طے شدہ بعض مقامات کے لیے صنعاء کے بین الاقوامی ہوائی اڈے سے تجارتی پروازوں اور ایندھن کے جہازوں کوالحدیدہ کی بندرگاہ میں داخل ہونے کی اجازت دینے پر بھی متفق ہوگئے ہیں۔

ایلچی نے مزید کہا کہ فریقین نے تعزاوریمن کی دیگر گورنریوں میں شاہراہوں کو کھلا رکھنے کی تجویز کی حمایت ہے۔

انھوں نے واضح کیا ہے کہ فریقین کی رضامندی سے جنگ بندی کی اس مدت میں دوماہ کے بعد تجدید بھی کی جا سکتی ہے۔اس جنگ بندی کا مقصد یمنیوں کو تشدد سے ایک ضروری وقفہ دینا، انسانی مصائب سے نجات دلانا ہے اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس سے تنازع کے خاتمے کی راہ ہموار ہوسکے گی۔

گرنڈبرگ نے جنگ بندی تک پہنچنے میں معاونت پر علاقائی اور بین الاقوامی متعلقہ فریقوں کا شکریہ ادا کیا ہے۔انھوں نے کہا کہ ’’تمام یمنی خواتین، مرد اور بچّے گذشتہ سات سال سے زیادہ عرصے سے جنگ کا بے حد نقصان اٹھا چکے ہیں،وہ اس جنگ کے خاتمے سے کم کی توقع نہیں رکھتے ہیں‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں