روس اور یوکرین

یوکرینی اورروسی صدورکے درمیان امن معاہدے کے مجوزہ مسودے پربالمشافہہ ملاقات کا امکان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

یوکرین کے ایک مذاکرات کار نے بتایا ہے کہ روس نے اس بات کا اشارہ دیا ہے کہ امن معاہدے کی دستاویزات کے مسودے پر نمایاں پیش رفت ہوچکی ہے اور اب اس پر دونوں ممالک کے صدور کے درمیان براہ راست مشاورت ہوسکتی ہے۔

انٹرفیکس یوکرین کی رپورٹ کے مطابق مذاکرات کار ڈیوڈ ارخمیا نے یوکرینی ٹیلی ویژن کو بتایا ہے کہ روس کریمیا کے سوادیگر امور پراپنے مؤقف سے دستبردار ہوگیا ہے اور اس حوالے سے اس نے یوکرین کے مجموعی مؤقف کو قبول کرلیا ہے۔البتہ وہ کریمیا پر اپنے مؤقف پر ڈٹا ہوا ہے۔

ارخمیا نےکہا کہ روسی صدر ولادی میرپوتین اوران کے یوکرینی ہم منصب ولودی میر زیلنسکی کے درمیان ملاقات کا مقام غالباً ترکی ہوگا لیکن ابھی اس ملاقات کے وقت اور جگہ کا حتمی تعیّن نہیں کیا گیا ہے۔

دونوں فریقوں نے حالیہ دنوں میں ہونے والے مذاکرات کو مشکل قراردیا ہے۔ فریقین کے درمیان یہ بات چیت ترکی میں بالمشافہہ ملاقاتوں میں ہوئی ہے۔اس کے علاوہ انھوں نے ورچوئل بھی بات چیت کی ہے۔

ارخمیا نے کہا کہ ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے جمعہ کو صدرپوتین اور زیلنسکی کو فون کیا تھا اور ایسا لگتا ہے کہ انھوں نے اپنی طرف سے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ وہ مستقبل قریب میں متحارب لیڈروں کے درمیان ملاقات کا اہتمام کرنے کوتیار ہیں۔

انھوں نے مزید کہا:’’اس ملاقات کی تاریخ اور نہ ہی جگہ کاابھی پتا ہے لیکن ہم سمجھتے ہیں کہ اس بات چیت کے استنبول یا انقرہ میں ہونے کا امکان ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں