یمن اور حوثی

یمن:جنگ بندی کے بعدایندھن سے لدے دوجہازحوثیوں کے زیرقبضہ الحدیدہ بندرگاہ میں داخل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

جنگ زدہ یمن کی بندرگاہ الحدیدہ میں ایندھن سے لدے دو جہاز سوموار کولنگرانداز ہوگئے ہیں۔حوثی ملیشیا کے زیرقبضہ الحدیدہ میں گذشتہ کئی مہینوں کے بعد ایندھن کی یہ پہلی کھیپ پہنچی ہے۔

حوثی ملیشیا کے کنٹرول میں یمن پیٹرولیم کمپنی (وائی پی سی) نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ایندھن کا جہاز سیسر اب 32 دن تک رُکے رہنے کے بعد الحدیدہ کی بندرگاہ پرپہنچ گیا ہے۔اتوار کے روز اس نے ایندھن کے پہلے جہاز کی آمد کا اعلان کیا۔اسے سمندر میں’’88 دن تک روکے رکھا گیا گیا تھا‘‘۔

وائی پی سی کے ترجمان اعصام المتوکل نے اے ایف پی کو بتایا کہ ان جہازوں کی آمد سے ایندھن کا بحران ختم نہیں ہوگا کیونکہ طلب بہت زیادہ ہے۔ لیکن اس سے اس کی شدت کم ہو سکتی ہے‘‘۔

حوثی ملیشیا کے زیرقبضہ علاقے،جن میں ملک کے بیشتر شمالی اور مغرب کے کچھ حصے شامل ہیں، گذشتہ کئی مہینوں سے ایندھن کے بحران کا شکار ہیں، حوثیوں نے عرب اتحاد پرجنوری کے آغاز سے تیل کے جہازوں کو روکنےکا الزام عاید کیا ہے۔

لیکن مسلمانوں کے مقدس ماہ رمضان کے پہلے دن ہفتہ کو یمن میں اقوام متحدہ کی ثالثی میں دو ماہ کی جنگ بندی عمل میں آئی ہےجس سے امید کی ایک کرن نظر آئی ہے۔جنگ بندی معاہدے کے تحت سرحد پار حملوں سمیت تمام زمینی، فضائی اور بحری فوجی کارروائیاں بند ہونی چاہییں۔

اس کے علاوہ الحدیدہ کی بندرگاہ میں ایندھن سے لدے 18 جہازوں کو داخل ہونے کی اجازت دی جائے گی اور حوثیوں کے زیر قبضہ صنعاء کے ہوائی اڈے کے اندراور باہر ہفتے میں دو تجارتی پروازیں دوبارہ شروع ہو سکتی ہیں۔

یمن کے لیے اقوام متحدہ کے انسانی رابطہ کار ڈیوڈ گریسلی نے کہا ہے کہ وہ صوبہ الحدیدہ کی بندرگاہوں کے ذریعے ایندھن کے جہازوں کی اجازت دینے کے عزم کا خیرمقدم کرتے ہیں۔انھوں نے کہا کہ یہ بندرگاہیں یمن میں ایندھن، خوراک اور دیگر اشیائے ضروریہ کے داخلے کے اہم مقامات ہیں۔

گریسلی نے مزید کہا کہ صنعاء بین الاقوامی ہوائی اڈے کے اندر اور باہر کچھ تجارتی پروازوں کی بحالی بہت سے یمنیوں کے لیے خوش آیند خبر ہوگی۔ان میں وہ لوگ بھی شامل ہیں جو بیرون ملک طبی علاج یا تعلیم حاصل کرنے کے موقع کے منتظر ہیں اور ان خاندانوں کے لیے جو رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں دوبارہ ملاپ کی امید رکھتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں