روس اور یوکرین

روس کا مرکزی ہدف یوکرین کے مشرق میں حملہ مکمل کرنا ہے: برطانیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

روس کی وزارت دفاع نے آج جمعرات کے روز اعلان میں بتایا کہ اس کی افواج نے دونتسک میں سلادکو کے علاقے پر مکمل کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔ وزارت دفاع کے مطابق خارکیف، میکولائف، زیبوریجیا اور چوگیف میں ایندھن ذخیرہ کرنے والے 4 اڈوں پر بم باری کی گئی اور 6 ڈرون طیاروں کو مار گرایا گیا ہے۔

دونتسک میں علاحدگی پسندوں کے عسکری ترجمان ایڈورڈ بیسورین نے جمعرات کے روز اعلان کیا ہے کہ یوکرین کے شہر ماریوپول کے وسطی حصے میں مرکزی معرکے ختم ہو چکے ہیں۔

دوسری جانب برطانیہ کی وزارت دفاع کے مطابق یوکرین کے مشرق میں دونباس کے علاقے میں روس کی جانب سے گولہ باری اور فضائی بم باری کا سلسلہ جاری ہے۔

جمعرات کے روز ٹویٹر پر وزارت دفاع نے بتایا کہ روسی افواج کا مرکزی ہدف یوکرین کے مشرق میں حملے کو پایہ تکمیل تک پہنچانا ہے۔ بنیادی ڈھانچے کے خلاف روسی حملوں کا مقصد یوکرین کی فوج کی صلاحیت کو کمزور کرنا اور یوکرین کی حکومت پر دباؤ بڑھانا ہے۔

یوکرین کے مشرق میں کئیف حکومت کے زیر کنٹرول ریجن لوگاسک کے گورنر سرگئی گیڈائی کے مطابق بدھ کے روز 1200 سے زیادہ افراد کو نکال لیا گیا۔ انہوں نے یوکرینی ٹیلی وژن کو دیے گئے ایک انٹرویو میں بتایا کہ روسی افواج کی شدید بم باری کے سبب انخلا کی کارروائیاں نہایت مشکل حالات میں انجام دی جا رہی ہیں۔

یوکرین کے دارالحکومت کے قریب کئی شہروں سے روسی انخلا کے بعد وہاں درجنوں لاشوں کے ملنے کے بعد روس پر "جنگی جرائم" کے ارتکاب کا الزام عائد کیا گیا۔ ان میں بوچا اور بورودیانکا جیسے شہر اہم ترین ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں