رکنیت معطلی کے بعد روس کا انسانی حقوق کونسل سے علاحدگی کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ میں روس کے مندوب گینڈائی کوزمین نے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل سے روس کے دستبرداری کا اعلان کیا۔

"روسی فیڈریشن نے 7 اپریل 2022 تک اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل میں اپنی رکنیت معطل کرنے کا قبل از وقت فیصلہ لیا ہے۔ کوزمین نے کہا کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی طرف سے روس کی رکنیت معطل کرنے کی قرارداد منظور کرنے کے بعد ہم انسانی حقوق کونسل سے الگ ہو رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ روس جنرل اسمبلی کی قرارداد کو ایک نامناسب اور سیاسی اقدام سمجھتا ہے۔

تاہم انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ روس انسانی حقوق کے شعبے میں اپنے بین الاقوامی وعدوں کی پاسداری جاری رکھے گا اور اس مسئلے پر "تعمیری بات چیت میں تعاون" کر ےگا

روس کی رکنیت معطل

جمعرات کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے ’یو این‘انسانی حقوق کونسل میں روس کی رکنیت معطل کرنے کے حق میں ووٹ دیا۔

جنرل اسمبلی نے یوکرین میں روسی افواج کی طرف سے "انسانی حقوق کی سنگین اور منظم خلاف ورزیوں" کے الزامات کی وجہ سے ماسکو کےخلاف قرارداد منظور کی۔

مسودے کے متن میں انسانی حقوق کے بحران اور یوکرین میں جاری انسانی بحران پر شدید تشویش کا اظہار کیا گیا ہے۔

یوکرین کی جانب سے روسی افواج پر بوچا قصبے میں سینکڑوں شہریوں کو ہلاک کرنے کے الزام کے بعد امریکا نے روس کی رکنیت معطل کرنے کا اعلان کیا تھا ۔روس یوکرین میں شہریوں پر حملے کی تردید کرتا ہے۔

روس جنیوا میں قائم انسانی حقوق کی کونسل میں تین سالہ مدت کے دوسرے سال میں ہے۔ اگرچہ انسانی حقوق کونسل کے فیصلوں کی پابندی لازمی نہیں تاہم اس کے باوجود کونسل کے فیصلے اہم سیاسی پیغامات اور اہمیت رکھتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں