روس میں "ایمنیسٹی انٹرنیشنل" اور "ہیومن رائٹس واچ" کی بندش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یوکرین میں کراماتورسک ریلوے اسٹیشن پر جمعہ 8 اپریل کو ہونے والے میزائل حملے کی بین الاقوامی سطح پر مذمت کا سلسلہ جاری ہے۔ واقعے میں کم از کم 50 افراد ہلاک ہوئے۔

ایسے میں جب کہ کارروائی کا الزام ماسکو پر عائد کیا جا رہا ہے ،،، روسی وزارت دفاع کا کہنا ہے کہ حملے کی منصوبہ بندی کئیف حکومت نے کی۔ اس کا مقصد شہر کی آبادی کو کوچ سے روکنا تھا تا کہ شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کیا جا سکے۔

دوسری جانب فرانسیسی وزیر خارجہ جان ایف لودراں نے بتایا ہے کہ یوکرین کے حکام نے مقامی آبادی پر دونباس سے بالخصوص ٹرینوں کے ذریعے کوچ کر جانے پر زور دیا تھا۔ حکام کو علاقے پر قبضے کے لیے روس کے وسیع حملے کا اندیشہ تھا۔

انہوں نے "فرانس 5" ٹی وی چینل کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ ریلوے اسٹیشن کو ایسے وقت نسانہ بنایا گیا جب وہاں پناہ گزینوں اور شہریوں کی بڑی تعداد موجود تھی لہذا اس کارروائی کو انسانیت کے خلاف جرائم میں شمار کیا جائے۔ لودراں نے حملے کو شرم ناک قرار دیا۔

ادھر روس نے انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں "ایمنیسٹی انٹرنیشنل" اور "ہیومن رائٹس واچ" کی مقامی شاخوں کو بند کر دیا ہے۔

جمعے کے روز روسی وزارت انصاف کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ایمنیسٹی انٹرنیشنل (برطانیہ) اور ہیومن رائٹس واچ (امریکا) کے مقامی مشنوں کو روس میں غیر ملکی غیر سرکاری تنظیموں کے سرکاری ریکارڈ سے خارج کر دیا گیا ہے۔ اس اقدام کی وجہ روسی قانون کی خلاف ورزی ہے۔

امریکا کے ایک دفاعی ذمے دار نے جمعے کے روز بتایا کہ ان کے ملک کے پاس ایسے اشارے ہیں کہ روس نے بعض ریزرو فوجیوں کو اکٹھا کرنا شروع کر دیا ہے۔ روس اس سلسلے میں 60 ہزار سے زیادہ افراد کو بھرتی کرنے کے لیے کوشاں ہے۔

یورپی کمیشن کی سربراہ اورسولا وون ڈیر لاین نے جمعے کے روز کئیف کے دورے کے دوران کہا کہ ماسکو پر عائد پابندیوں کے سبب روس کے "ٹوٹنے" کا خطرہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یوکرین کا یورپی مستقبل قریب ہے۔

یوکرینی صدر ولودی میر زیلنسکی کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں ڈیر لائن کا کہنا تھا کہ ضرورت پڑی تو روس پر زیادہ سخت پابندیاں عائد کی جائیں گی۔

یورپی یونین کے ممالک اب تک روس اور بیلا روس کے کم از کم 29.5 ارب یورو کے اثاثے منجمد کر چکے ہیں۔ اسی طرح یورپی ممالک نے جمعرات کے روز روسی کوئلے کی درآمد اور روسی بحری جہازوں کے لیے یورپی بندرگاہوں کی بندش پر آمادگی کا اظہار کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں