اگرروس نے’ڈھونگ ریفرنڈم‘منعقدکیے تویوکرین مذاکرات سے دستبردارہوجائے گا:صدرزیلنسکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یوکرین کے صدرولودی میرزیلنسکی نے خبردارکیا ہے کہ اگر روس ماریوپول شہر میں عوام کو تباہ کرتا ہے اور اپنے زیرقبضہ یوکرینی علاقوں میں ’’ڈھونگ جمہوریاؤں‘‘کی تشکیل کے لیے’’فرضی ریفرنڈم‘‘کا انعقاد کرتا ہے تو کیف اس کے ساتھ ہرقسم کی بات چیت سے دستبردار ہوجائے گا۔

یوکرینی صدر ہفتے کے روز دارالحکومت کیف میں ایک نیوزکانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔انھوں نے کہا کہ اگر ماریوپول میں ہمارے افراد مارے جاتے ہیں اور اگرجنوبی علاقے خیرسن میں ڈھونگ ریفرینڈم منعقد کیاجاتا ہے توپھر یوکرین کسی بھی مذاکراتی عمل سے دستبردار ہو جائے گا۔

انھوں نے کہا کہ وہ ماریوپول میں یوکرین کے ان تمام فوجیوں کے تبادلے کے لیے تیارہیں جو شہر کا دفاع کر رہے ہیں تاکہ’’ان لوگوں کو بچایا جاسکے جو خود کو خوفناک صورت حال میں پاتے ہیں اورمحاصرے میں ہیں‘‘۔

صدرزیلنسکی نے صحافیوں کو بتایا کہ ماریوپول میں فوجیوں کے ساتھ ان کا’’آخری رابطہ‘‘ایک گھنٹا پہلے ہوا تھا۔مارچ کے آغاز میں شہرپر روسی فوج کے حملے اور اس کے محاصرے کے آغاز کے بعد سے’’آج مشکل ترین دن تھا‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں