روس اور یوکرین

روس کئی روزمیں ڈونبس میں ’معمولی پیش قدمی‘کرسکا ہے:امریکی دفاعی عہدہ دار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا کے محکمہ دفاع کے ایک اعلیٰ عہدہ دار نے کہا ہے کہ روسیوں نے گذشتہ کئی دنوں میں ڈونبس میں یوکرینی فوج کے خلاف لڑائی میں بہت معمولی پیش قدمی کی ہے۔

اس عہدہ دار نے نام ظاہرنہ کرنے کی شرط پرکہا:’’میں آپ کوصرف یہ بتاؤں گا کہ ڈونبس میں روسیوں کی جانب سے ہمیں کم سے کم پیش رفت نظرآئی ہے۔روسی افواج اب بھی ناقص کمان اورکنٹرول، پست حوصلے اور’مثالی لاجسٹکس کی کمی‘ کا شکار ہیں‘‘۔

عہدہ دارنے صحافیوں کوبتایاکہ ’’بالکل واضح طور پر، ایک حادثاتی نفرت ہے جو ہم روسیوں کی طرف سے نہ صرف ہوا میں بلکہ زمین پر بھی دیکھ رہے ہیں‘‘۔

پینٹاگون کےعہدہ دار کے مطابق روس نے 2 ماہ قبل یوکرین پر حملہ کرنے کے بعد پہلی مرتبہ2100 سے زیادہ میزائل مختلف اہداف پرداغے ہیں۔

واضح رہے کہ حالیہ مہینوں میں واشنگٹن نے یوکرین کو کروڑوں ڈالر کی فوجی امداد اور تربیت مہیا کرنے کے اعلانات کیے ہیں اور اس کی جانب سے یوکرین منتقلی سے قبل خطے میں فوجی اور انسانی امداد مہیا کرنے کا سلسلہ جاری ہے۔

گذشتہ 24 گھنٹے کے دوران میں امریکا نے 14 طیاروں پرامدادی سامان یوکرین بھیجا ہے اور اگلے 24 گھنٹے میں مزید کئی طیارے بھی پہنچ جائیں گے۔

عہدہ دار نے بتایا کہ یوکرین کے قریباً 200 فوجیوں نے امریکا کی جانب سے مہیاکردہ ہوإٹزرآرٹلری سسٹم کی تربیت مکمل کرلی ہے۔مزید 20 یوکرینیوں نے فینکس گھوسٹ ڈرونز پرایک ہفتہ بھر کا کورس مکمل کیا ہے۔اسے امریکا نے یوکرین کی ضرورت کے مطابق بنایا ہے۔

ان کے بہ قول 121 فینکس گھوسٹ ڈرونزکی ایک معقول تعداد پہلے ہی یوکرین میں موجود ہے اور ہم نے یوکرینیوں کو اس کے استعمال کے بارے میں ضروری تربیت دی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں