امریکا40 ہزار فوج سے ایران کا مقابلہ کیسے کرسکتا ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

جب مشرق وسطیٰ کے لیے اپنے وعدوں کے بارے میں بات کرتے ہیں تو امریکیوں کے پاس اس کے کوئی ٹھوس دلائل نہیں ہوتے۔ شاید خطے کے بہت سے ممالک کے لیے پریشان کن بات یہ ہے کہ امریکی اپنے اتحادیوں کے ساتھ ایرانی خطرات کا مقابلہ کرنے کے لیے جوش و جذبے سے کام نہیں لے رہے ہیں۔

اس کے باوجود امریکی انتظامیہ اب بھی مشرق وسطیٰ اور سینٹرل کمانڈ کے آپریشنز کے علاقے کو ’اسٹریٹجک‘ سمجھتی ہے۔

گذشتہ اپریل کے آغاز میں امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن نے تصدیق کی کہ ان کا ملک ایران کی جانب سے میزائلوں اور بغیر پائلٹ ڈرونز کے استعمال کا مقابلہ کرنے کے لیے کام جاری رکھے گا۔انہوں نے مزید کہا تھا کہ ہم ایران اور اس کی ملیشیاؤں کو روکنے کے لیے اپنے شراکت داروں کے ساتھ مضبوطی سے کھڑے رہیں گے۔

مختصر تعداد

تھوڑی دیر کے لیےامریکیوں نے بھی اس مؤقف کو دہرایا لیکن اطلاق مختلف معلوم ہوتا ہے۔

العربیہ کے ذرائع کے مطابق مشرق وسطیٰ میں امریکی فوجیوں کی تعداد کم ہو کر 40 ہزار رہ گئی ہے۔ تاہم عراق اور شام میں تعیناتی کے علاوہ کویت، بحرین، قطر اور متحدہ عرب امارات میں امریکی فوج کے اڈے موجود ہیں۔
اس نکتے کا جواب دیتے ہوئے پینٹاگان کے ایک اہلکار نے کہا کہ "ہاں آپ یہ بھی کہہ سکتے ہیں کہ یہ تعداد 40,000 سے تھوڑی کم ہے۔"

اس تعداد کا تقریباً ایک سال قبل 70,000 فوجیوں کی سطح اور افغانستان سے انخلاء کے دوران اس تعداد کے ایک لاکھ سے زیادہ ہونے کے ساتھ موازنہ کیا جائے تو یہ کہا جا سکتا ہے کہ یہ تعداد 20 سال سے زائد عرصے میں سب سے کم ہے۔

کم سے کم حد

امریکی سینٹرل کمانڈ کے سابق کمانڈر جوزف ووٹل نے ایک ای میل میں کہا کہ "یہ تعداد یقینی طور پر اس سے کم ہے جب وہ 2016 اور 2019 کے درمیان امریکی سینٹرل کمانڈ کے کمانڈر تھے۔"

لیکن انہوں نے زور دیا کہ "یہ ذہن میں رکھنا ضروری ہے کہ اس مرحلے کے دوران امریکی افواج عراق، شام اور افغانستان میں مہم چلا رہی تھیں۔ اس سے سب سے زیادہ تعداد میں کمی کی گئی افواج کا حساب لگایا جاتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکی افواج کویت، بحرین، قطر اور متحدہ عرب امارات میں فوجی اڈے برقرار رکھے ہوئے ہیں اور اگر ہم زیادہ تعداد میں خطے میں واپس آنا چاہتے ہیں تو ہمیں ان کی ضرورت ہوگی۔

انہوں نے زور دیا کہ تعداد پہلے ہی کم ہو چکی ہے لیکن امکانات کافی ہیں۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ افغانستان میں مشن کے خاتمے سے بلاشبہ خطے میں امریکی فوجیوں کی تعداد میں کمی آئی ہے لیکن امریکیوں سے بات کرنے پر یہ تاثر ملتا ہے کہ وہ خطے میں تعینات فوجیوں کی کم سے کم تعداد کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں۔

امریکی مفادات

اس کے علاوہ امریکی عسکری ذرائع نے العربیہ کو وضاحت کی کہ سینٹرل کمانڈ اپنے مشن کو دو حصوں میں تقسیم کرتی ہے: پہلا امریکی اہم مفادات کا تحفظ اور دوسرا داعش کا مقابلہ کرنا ہے۔

انہوں نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ خطے میں امریکی افواج کا عملہ روزانہ کام کرتا ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ خطے میں تعینات امریکی افواج چیلنجز کا سامنا کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں۔ پینٹاگان کے ایک اہلکار نے کہا کہ "سنٹرل کمانڈ جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کے چیئرمین کی مشاورت سے امریکی وزیر دفاع سے براہ راست بات کرتی ہے، مشترکہ کمانڈ پلان کا جائزہ لیتی ہے اور سینٹرل کمانڈ سیکریٹری دفاع سے اس کی ضروریات پوچھتی ہے"۔

اس وقت خطے کو درپیش سب سے بڑا چیلنج میزائل اور ڈرونز ہیں جو ایران یا اس کی ملیشیا خطے میں تعینات امریکی اڈوں پر داغ سکتے ہیں۔ تاہم جب بات تہران یا اس کی ملیشیا کے مشرق کے ممالک کی سرزمین پر حملہ کرنے کی ہو تو معاملات مبہم ہو جاتے ہیں۔

فقط ہم آہنگی

امریکیوں کا دعویٰ ہے کہ ان کے پاس خطے میں اپنے اڈوں اور افواج کا دفاع کرنے کے لیے کافی طاقت ہے۔ پینٹاگان کے سینیر اہلکار نے بھی زور دیا کہ یہ "درست!" ہے۔

تاہم مسئلہ بھاری ہو جاتا ہےکیونکہ امریکی اب سمجھتے ہیں کہ ان کا کام دوستوں کا دفاع کرنا نہیں بلکہ اپنے دفاع میں دوستوں کی مدد کرنا ہے۔

اس تناظر میں امریکی صدر کی انتظامیہ نے "انٹیگریٹڈ ڈیٹرنس" کا نظریہ پیش کیا ہے۔ گویا وہ خطے کے ممالک سے کہہ رہی ہے کہ وہ اپنے دفاع، بالخصوص فضائی، میزائلوں اور ڈرونز کے خطرات کا مقابلہ کرنے کے لیے ہم آہنگی پیدا کریں جبکہ اقوام متحدہ ریاستیں علاقائی ممالک کے ایک گروپ کے درمیان رابطہ کاری کا کردار ادا کرتی ہیں جنہیں خطرات کا سامنا ہے اور انہیں بنیادی ڈھانچے اور جدید ہتھیاروں کی ضرورت ہے۔

یہ واضح ہے کہ موجودہ امریکی انتظامیہ خطے کے ممالک کے درمیان بڑھتے ہوئی ہم آہنگی سے مطمئن ہے لیکن اس سے ان ممالک میں شدید تشویش پائی جاتی ہے کہ اتحادی ممالک پر ممکنہ حملے کے وقت امریکا سست یا لاتعلق ہوجائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں