روس اور یوکرین

برطانیہ کی یوکرین کےلیے1.3 ارب آسٹریلین پاؤنڈ کی فوجی امداد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

برطانوی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ وہ یوکرین کو مزید 1.3 ارب آسٹریلین پاؤنڈ کی فوجی اور دوسری امداد فراہم کرے گی۔ برطانیہ کی طرف سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب آج اتوار کو یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی G7 رہ نماؤں کے ساتھ ویڈیو کال کریں گے۔

نیا برطانوی عہد یوکرین سے متعلق برطانیہ کے اخراجات کے وعدوں کو تقریباً دوگنا کر دیتا ہے۔

برطانوی حکومت نے اشارہ کیا کہ یہ عراق اور افغانستان کی جنگوں کے بعد تنازعات سے متعلق اخراجات کی بلند ترین شرح ہے، حالانکہ اس نے ان حسابات کی تفصیلات نہیں بتائی ہیں۔

برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن 24 فروری کو روسی صدر ولادی میر پوتین کی جانب سے فوجی آپریشن شروع کرنے کے بعد سے روسی افواج کے خلاف مزاحمت کے لیے یوکرین کی کوششوں کے سب سے مضبوط حامیوں میں سے ایک ہیں۔

برطانوی حکومت نے یوکرین کو ٹینک شکن میزائل، فضائی دفاعی نظام اور دیگر ہتھیار بھیجے ہیں۔

معصوم شہریوں کا قتل عام اور خواتین کا ریپ

برطانوی وزیر خارجہ لز ٹرس نے ہفتے کے روز کہا کہ اس بات کے شواہد موجود ہیں کہ روسی افواج بے گناہ شہریوں کو قتل اور خواتین کی عصمت دری کر رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یوکرین میں روس کی "خوفناک" فوجی مہم نے یورپ میں امن و استحکام کو غیر مستحکم کر دیا ہے۔

برطانیہ کے خارجہ سکریٹری نے کہا کہ روسی صدر ولادیمیر پوتین نے برتری حاصل کرنے کی مایوس کن کوشش میں مشرقی اور جنوبی یوکرین میں ایک نیا حملہ شروع کیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ماریوپول جیسے شہروں میں "مسلسل بربریت کی قیمت بے گناہ ادا کر رہے ہیں"۔ انہوں نے مزید کہا کہ برطانیہ نے کیف کو دو ارب ڈالر مالیت کا انسانی، فوجی اور اقتصادی امداد کا ایک جامع پیکج فراہم کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کیف کی فوج کی مدد کے لیے بکتر بند گاڑیاں اور ٹینک شکن ہتھیار فراہم کیے جس سے کیف کو روسی افواج کی پیش قدمی روکنے میں مدد کی۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہم اپنے بین الاقوامی شراکت داروں اور اتحادیوں کے ساتھ نارتھ اٹلانٹک ٹریٹی آرگنائزیشن (NATO) کو مضبوط بنانے کے لیے کام کر رہے ہیں تاکہ یہ لچکدار اور یورپی سلامتی کو درپیش تمام خطرات سے نمٹنے کے قابل ہو"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں