شام کی فضاؤں میں اسرائیلی جنگی طیارے روسی میزائلوں کا ہدف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اسرائیل گذشتہ برسوں کے دوران میں شام میں سیکڑوں حملے کر چکا ہے۔ ان میں تازہ ترین کارروائی دو روز قبل شام کے مغرب میں واقع قصبے مصیاف میں کی گئی۔ اس دوران میں شام میں روس کے زیر انتظام فضائی دفاعی بیٹری نے پہلی مرتبہ شامی حدود کی خلاف ورزی کرنے والے اسرائیلی طیاروں پر میزائل داغے۔

اس حوالے سے News Israel 13 ٹی وی چینل نے بتایا کہ روسی طیاروں کی جوابی کارروائی سے اسرائیلی فضائیہ کے طیاروں کے لیے کوئی خطرہ پیدا نہیں ہوا اور نہ بیٹری کے ریڈار نے طیارے پر کوئی لاک لگایا۔

حالیہ عرصے میں اسرائیل اور روس کے بیچ تعلقات میں کشیدگی دیکھنے میں آئی ہے۔ اس کی بنیاد یوکرین میں جاری جنگ ہے۔ اس تناؤ کا عکس شام کے ساتھ اسرائیل کی شمالی سرحد پر بھی واضح طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

مذکورہ اسرائیلی چینل نے بتایا کہ روس ،،، شام کو S-300 سسٹم کی 4 بیٹریاں فراہم کر رہا ہے۔ خیال ہے کہ یہ نظام شامی فوج کے زیر انتظام ہے۔ تاہم اس حوالے سے فیصلہ کرنے والے روسی افسران ہیں۔

اسرائیل وقتا فوقتا شام میں حملے کرتا رہتا ہے۔ اس کے مطابق وہ ایرانی اہداف کو نشانہ بناتا ہے۔

اسرائیلی اخبار "ہآرٹز" کی سابقہ رپورٹوں میں سوال اٹھایا گیا تھا کہ 20 ماہ سے زیادہ عرصے سے S-300 نظام پاس ہونے کے باوجود شام کی جانب سے اسرائیلی حملوں کا مقابلہ کرنے کے واسطے یہ سسٹم استعمال کیوں نہیں کیا جا رہا !

اسرائیلی اخبار کا کہنا تھا کہ اس کی وجوہات میں سے ایک یہ وجہ بھی ہے کہ مذکورہ سسٹم کا آپریشن مکمل طور پر روسی مشیروں اور آپریٹروں کے کنٹرول میں ہے۔ وہ شامی فوج کو میزائل داغنے کی اجازت نہیں دیتے۔

دوسری جانب روسی اور اسرائیلی تعلقات میں بحرانی کیفیت کا آغاز ستمبر 2018ء میں اسرائیلی جنگی طیاروں کے ہاتھوں شامی فضاؤں میں ایک روسی طیارے کو مار گرائے جانے کے بعد ہوا۔ یوکرین میں روسی فوجی آپریشن کے آغاز کے بعد یہ بحران سنگین تر ہو گیا۔

اسرائیلی وزیر خارجہ یائر لیپڈ نے یوکرین پر روسی حملے کو "بین الاقوامی نظام کی کھلی خلاف ورزی" قرار دیا تھا۔ جواب میں روس نے اسرائیل پر الزام عائد کیا کہ وہ روس کے بقول یوکرین میں "جدید نازیت" کو سپورٹ کر رہا ہے۔

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے تو یکم مئی کو ایک ٹی وی انٹرویو میں یہاں تک کہہ دیا تھا کہ "نازی رہ نما ایڈولف ہٹلر کے ہاتھوں پر یہودیوں کا خون لگا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں