سعودی عرب:خلائی شعبے میں شائقین کے لیے پانچ ہفتے کے تربیتی پروگرام کا آغاز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب نے خلائی صنعت میں مہارت کے شوقین افراد کے لیےتربیتی پروگرام شروع کیا ہے۔’مدار‘کے عنوان سے یہ پروگرام خلائی شعبے اور متعلقہ سائنسی پروگراموں میں مقامی سطح پر علم کے فروغ کے لیے شروع کیا گیا ہے۔

سعودی پریس ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق پانچ ہفتوں تک جاری رہنے والے اس پروگرام میں تین ٹریک پر تربیت دی جائے گی۔یعنی خصوصی خلائی مدار، سیارچوں اور قومی خلا میں کم سے کم 1000 مرد اورخواتین کی تربیت کا اہتمام کیا جائے گا۔

اس پروگرام کا مقصد نئے گریجوایٹس، اس شعبے میں دلچسپی رکھنے والوں اورپہلے سےاس صنعت سے وابستہ افراد کو اپنی صلاحیتیں نکھارنےکا موقع مہیا کرنا ہے۔

ایس پی اے کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سعودی خلائی کمیشن کی افرادی قوت کی ترقی، خلائی شعبے میں قومی صلاحیتوں اورمہارتوں کونکھارنے، تجربے اورعلم کے حامل افراد اور اس شعبے میں دلچسپی رکھنے والوں کو اہل بنانے اوراپنے کارکنوں کوسعودی عرب میں خلائی شعبے کو آگے بڑھانے میں مدد دینے کے لیے یہ اقدام کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ مارچ 2022 میں سعودی خلائی کمیشن (ایس ایس سی) اور برطانیہ کی خلائی ایجنسی نے بیرونی خلا کے پرامن استعمال میں تعاون سے متعلق مفاہمت کی ایک یادداشت پر دست خط کیے تھے۔اس کا مقصد خلائی سرگرمیوں میں تعاون کے لیے ایک فریم ورک فراہم کرنا تھا۔

ایس پی اے کے مطابق اس سمجھوتے میں خلا کے پُرامن استعمال میں مشترکہ دلچسپی کے شعبوں کا جائزہ لینے اور خلا اور اس کی مختلف ٹیکنالوجی میں طرفین کے درمیان تعاون بڑھانے پر زوردیا گیا ہے۔اس کے علاوہ دونوں اطراف سے متعلقہ شعبوں میں کام کرنے والے افراد کے تبادلے میں سہولت کاری پرزور دیا گیا ہے۔

اسی ماہ کے اوائل میں سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے قومی ترقیاتی فنڈ (این ڈی ایف) کے لیے ایک نئی حکمت عملی کا آغاز کیا ہے اور اسے ایک مربوط قومی مالیاتی ادارے میں تبدیل کر دیا ہے۔

نئی حکمت عملی کے تحت قومی ترقیاتی فنڈ سے 2030 تک 570 ارب ریال (152 ارب ڈالر) سے زیادہ رقوم ملکی معیشت کے مختلف شعبوں کے لیےمہیا کی جائے گی۔اس طرح مملکت کی حقیقی جی ڈی پی میں اضافے کے لیے معاونت مہیا ہوگی۔اس کا مقصد 2030 تک غیر تیل جی ڈی پی کوتین گنا بڑھا کر 605 ارب ریال (161 ارب ڈالر) تک پہنچانا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں