سعودی ڈاکٹر نے دورانِ پروازخاتون مریضہ کو زچگی میں کیسے مدد دی؟

آسٹریلیا جانے والے مسافرطیارے میں خاتون کے ہاں بچے کی پیدائش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

برونائی ایئر لائن کی آسٹریلیا جانے والی پرواز کو ٹیک آف کیے ابھی آدھا گھنٹہ ہی گذرا تھا کہ ہوائی جہاز کے عملے نے مسافروں کو بتایا گیا کہ ایک خاتون مسافر تکلیف میں ہیں اور انہیں طبی امداد فراہم کرنے کے لیے کسی ڈاکٹر کی ضرورت ہے۔ اگر مسافروں میں کوئی ڈاکٹر موجود ہے تو وہ مدد کرے۔ عملے کی طرف سے مدد کی پکار سُن کر تمام مسافر پریشان ہوگئے، مگر ان کے درمیان ایک سعودی ڈاکٹر بھی موجود تھے جنہوں نے خود کو اس خدمت کے لیے رضا کارانہ طور پر پیش کر دیا۔

سعودی صحت عامہ کے ڈاکٹر ملفی الخنجر نے بتایا کہ رائل برونائی ایئرلائنز کے طیارے میں آسٹریلیا کے سفرکے دوران جہاز کو ٹیک آف کیے آدھا گھنٹہ گذرا تھا کہ عملے کی جانب سے مسافروں کو کال جاری کی گئی کہ اگران میں کوئی ڈاکٹر ہے تو وہ ایک مریضہ کی مدد کے لیے آگے آئے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’میں نے خود کو عملے کے سامنے پیش کیا تو معلوم ہوا کہ وہاں ایک فلپائنی خاتون دردِ زہ میں مبتلا ہے۔ خاتون حمل کے 38ویں ہفتے میں تھی اور اب وہ زچگی کے مرحلے میں پہنچ چکی تھی۔

اُنہوں نےبات جاری رکھتے ہوئے بتایا کہ "میں نے عملے سے کہا کہ وہ ضروری آلات تیار کریں اور گراؤنڈ اسٹیشن سے بات کریں تاکہ کسی ماہر ڈاکٹر سے اس کیس کے حوالےسے مشورہ لیا جا سکے۔ چنانچہ آلات ملنے اور زمین پر موجود ڈاکٹر سے مشاورت کے بعد معاملہ میرے اور عملے کے حوالے کر دیا گیا۔"

ڈاکٹر ملفی الخںجر نے مزید کہا کہ "الحمد للہ، بچے کی پیدائش کا مرحلہ بہ خیر و خوبی ہوائی جہاز میں انجام پایا۔ اس کے بعد ہم نے 3 گھنٹے کی فلائٹ کے دوران ماں اور بچے کی حالت پر نظر رکھی۔ ماں اور نوزائیدہ بچے کی صحت بہترین تھی۔ جب ہم ہوائی اڈے پر اترے تو ماں نے پھولوں کے ساتھ ہمارا استقبال کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں