یوکرین پر روسی حملے کے بعد دنیا بدل چکی ہے: برطانوی آرمی چیف

یورپ میدان جنگ بن سکتا ہے، اپنی سرزمین پر جنگ لڑنے کو تیار رہنا ہو گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

برطانوی فوج کے سربراہ جنرل سر پیٹرک سینڈر نے خبردار کیا ہے کہ یوکرین پر روسی حملے کی وجہ سے یورپ کے میدان جنگ بننے کا خطرہ ہو سکتا ہے اس لیے تیار رہنا ہو گا۔

برطانوی فوجی سربراہ نے یہ بات 16جون کو کہی ہے۔ واضح رہے 1941 کے بعد نئے برطانوی آرمی چیف نے پہلی بار اپنی سرزمین پر جنگی خطرے کے سائے میں فوجی کمان سنبھالی ہے۔

جنرل سینڈر نے کہا '' یوکرین پر روسی حملے کے بعد ہمارا یہ اولیں ہدف ہے کہ ہم برطانیہ کی حفاظت کے لیے اپنی زمین پر جنگ جیتنے کے لیے تیاری میں رہیں اور اس حوالے سے روسی خطرے کے پیش نظر اپنی فوجی قوت کو مزید طاقت دیں۔ ''

''کیونکہ 24 فروری کے بعد دنیا تبدیل ہو چکی ہے۔ اب ایک ایسی فوج کی ضرورت ہے جو لڑنے کی بہترین صلاحیت کی حامل ہو اور اپنے اتحادیوں کے ساتھ مل کر روس کو جنگ میں شکست دے سکے۔''

برطانوی فوجی سربراہ نے زور دے کر کہا'' ہمیں اپنے فوجی تحرک اور ایک جدید فوج کے طور پر استعداد کو اور بڑھانا ہو گا تاکہ ہم روس کو یورپ پر کسی مزید قبضے سے روک سکیں۔'' ہماری نسل کو یورپ کے اندر ایک بار پھر جنگ لڑنا ہو گی۔''

واضح رہے نیٹو ممالک اور یورپی یونین نے یوکرین پر روسی حملے کے بعد سفارتی سطح پر تصادم کو روکنے کی کوششیں کی ہیں۔ مگر سو دن سے زیادہ گذر جانے کے باوجود کوئی بڑی کامیابی نہیں مل سکی ہے۔

اگرچہ مغربی ممالک نے یوکرین کے لیے اس دوران کروڑوں ڈالر کا جنگی آلات بھیجے ہیں مگر اس امر کی بھی پوری کوشش کی ہے کہ جوہری قوت کے حامل روس کے خؒلاف جنگ کا براہ راست نہ بنے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں