صدربائیڈن کاامریکی شہرمیں پاکستانیوں سمیت چارافرادکے قتل پراظہارِرنج وغم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

صدر جو بائیڈن نے اتوار کے روز نیومیکسیکو میں پاکستانیوں سمیت چارایشیائی نژاد مسلمانوں کے قتل پرگہرے دکھ اورافسوس کا اظہارکیا ہے اوران کی ہلاکتوں کی مذمت کی ہے۔

امریکی صدر نے ٹویٹر پر کہا کہ ریاست کے شہرالبوکرک میں چار مسلمان افراد کی ہولناک ہلاکتوں پرمیں رنج وغم میں مبتلاہوں۔

انھوں نے کہا کہ ’’اگرچہ ہم مکمل تحقیقات کے منتظر ہیں مگرمیری دعائیں متاثرہ خاندانوں کے ساتھ ہیں اور میری انتظامیہ مسلم کمیونٹی کے ساتھ پختگی سے کھڑی ہے۔ان نفرت انگیز حملوں کی امریکا میں کوئی جگہ نہیں ہے‘‘۔

نیومیکسیکوکے سب سے بڑے شہرالبوکرک میں پولیس نے ہفتے کے روز بتایا کہ وہ تین مسلمان افراد کے قتل کی تحقیقات کررہی ہے۔اب پولیس کو شُبہ ہے کہ ان کا تعلق گذشتہ سال ہونے والے ایک چوتھے قتل سے ہے۔

البوکرک پولیس ڈیپارٹمنٹ نے ایک بیان میں کہا کہ اس کوجمعہ کی شب ایک اورمقتول کا پتاچلا تھا۔ٹی وی اسٹیشن کے او بی 4 کی رپورٹ کے مطابق اس شخص کی لاش لوتھرن فیملی سروسز کے دفتر کے قریب سے دریافت ہوئی ہے۔یہ دفترپناہ گزینوں کو امداد فراہم کرتا ہے۔

پولیس نے اس شخص کی شناخت نہیں کی لیکن کہا کہ ’’اس کی عمربیس،پچیس سال تھی۔وہ مسلمان ہے اور جنوبی ایشیا سے تعلق رکھنے والاہے‘‘۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ تفتیش کاروں کا خیال ہے کہ جمعہ کے قتل کا تعلق جنوبی ایشیا سے تعلق رکھنے والے مسلمان افراد کے حالیہ تین قتلوں سے بھی ہو سکتا ہے۔

اس سے قبل قتل ہونے والوں میں دوپاکستانی مسلمان مرد تھے۔ان میں ایک 27 سالہ نوجوان کی لاش یکم اگست کو ملی تھی اور ایک 41 سالہ شخص کی لاش 26 جولائی کو ملی تھی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ سراغ رساں اب اس بات کی تحقیقات کررہے ہیں کہ آیاان تینوں قتلوں کا تعلق افغانستان سے تعلق رکھنے والے ایک مسلمان شخص کی موت سے ہے جسے 7 نومبر2021 کوالبوکرک میں ایک کاروبار سے باہرقتل کردیا گیا تھا۔مقتول یہ کاروباراپنے بھائی کے ساتھ مل کرچلارہا تھا۔

پولیس نے ان واقعات سے متعلق معلومات رکھنے والے کسی بھی شخص پرزوردیا کہ وہ اس کی اطلاع دے اور کہا کہ ایف بی آئی بھی ان پُراسرار واقعات کی تفتیش میں مدد کررہی ہے۔

نیومیکسیکو کی گورنرمشعل لوجان گریشم نے ان ہلاکتوں پرغم وغصے کا اظہار کرتے ہوئے انھیں’’مکمل طورپرناقابل برداشت‘‘ قرار دیا اور کہا کہ وہ تفتیش میں مدد کے لیے ریاستی پولیس کے اضافی افسروں کو البوکرک بھیج رہی ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ہم البوکرک اورعظیم تر نیومیکسیکو کی مسلم کمیونٹی کی حمایت کے لیے ہر ممکن کوشش جاری رکھیں گے۔

امریکا میں مسلم شہری حقوق کے سب سے بڑے گروپ امریکی اسلامی تعلقات کونسل (سی اے آئی آر) نے ان افراد کے قاتل یا قاتلوں کی گرفتاری میں معاون معلومات فراہم کرنے والے کو10 ہزارڈالربہ طورانعام دینے کا اعلان کیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق قتل کی ان وارداتوں کے بعد شہرکی مسلم کمیونٹی میں تناؤمیں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔اسلامی مرکزنیومیکسیکو کے عوامی امور کے ڈائریکٹر طاہرگوبا نے البوکرک جرنل کو بتایا کہ اب لوگ گھبراہٹ کا شکارہونے لگے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں