ٹرمپ کا ماراےلاگو چھاپامارکارروائی کے بعد امریکا میں درجہ حرارت ’کم‘ کرنے پرزور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکا کے سابق صدرڈونلڈ ٹرمپ نے مار-اے-لاگو میں اپنی رہائش گاہ پر چھاپامارکارروائی کے ردعمل میں وفاقی ادارہ تحقیقات (ایف بی آئی) اور محکمہ انصاف کو دھمکیاں دینے کے بعد امریکا میں ’’درجہ حرارت‘‘ کم کرنے کی ضرورت پرزوردیا ہے۔

فاکس نیوزڈیجیٹل کو سوموار کوانٹرویو میں ٹرمپ نے کہا کہ ’’جو کچھ ہورہا ہے اس پر لوگ بہت ناراض ہیں۔ہم مدد کے لیے جو کچھ بھی کر سکتے ہیں،کریں گےکیونکہ ملک میں درجہ حرارت کو کم کرنا ہوگا‘‘۔انھوں نے کہا کہ اگر ایسا نہیں ہوتا تو خوفناک واقعات رونما ہوسکتے ہیں۔

لیکن ٹرمپ نے خبردار کیا کہ ’’اس ملک کے عوام کسی اورگھوٹالے کے حق میں کھڑے نہیں ہوں گے‘‘۔

سابق امریکی صدراس بات کا ذکرکر رہے تھے جسے انھوں نے’’گھوٹالے اورچڑیلوں کا شکار‘‘کہاتھا۔اس میں اس وقت ان کی حریف صدارتی امیدوارہلیری کلنٹن کی انتخابی مہم بھی شامل تھی۔

کلنٹن نے تب یہ دعویٰ کیا تھا کہ ٹرمپ نے 2016 کے انتخابات پراثراندازہونے کے لیے روس کے ساتھ ملی بھگت کی تھی لیکن ٹرمپ اور نہ ہی ان کے خاندان کے کسی فردپرفردجُرم عایدکی گئی تھی اور ایک خصوصی وکیل کو سابق صدر کے مجرم ہونے کا کوئی ثبوت نہیں ملا تھا۔

گذشتہ ہفتے ایف بی آئی نے فلوریڈا میں ان کی رہائش گاہ پر چھاپامارکارروائی کی تھی اور بعض کلاسیفائیڈ دستاویزات کوضبط کرلیا تھا۔اس کے بعد ٹرمپ نے ایک بار پھر خود کو تنازعات کے بیچ میں الجھا پایا ہے۔

ری پبلکن قانون سازوں سمیت ٹرمپ کے حامیوں نے ڈیموکریٹس کا آلہ کاربننے پر محکمہ انصاف اور ایف بی آئی پرکڑی نکتہ چینی کی ہے۔ یہ واضح نہیں ہے کہ آیا ٹرمپ 2024ء میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں دوبارہ امیدوارہوں گے یا نہیں۔ تاہم پرائمری اور دیگر مقامی انتخابات سے پتا چلا ہے کہ سابق صدر کا ریپبلکن پارٹی کے اندر اب بھی نمایاں کنٹرول ہے۔

دریں اثناء ڈونلڈٹرمپ کے قریبی ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے فاکس نیوزنے خبر دی ہے کہ وہ ’’جلد ہی‘‘ دوبارہ انتخاب لڑنے کے بارے میں اپنے مؤقف کا اعلان کریں گے۔

ٹرمپ نے پیر کے روز فاکس نیوزڈیجیٹل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ملک انتہائی خطرناک حالت میں ہے۔لوگوں میں زبردست غصہ ہے۔ایسا میں نے پہلے کبھی نہیں دیکھا چڑیلوں کے شکارسال کے بعد یہ ایک نیا سال ہے۔

انھوں نے کہا کہ وہ اور’’میرے لوگ‘‘ تفتیش میں مدد کے لیے ہر ممکن کوشش کریں گے۔انھوں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سےامریکا کے ایک سابق صدر کے گھر میں گھسنےکے اقدام پر تنقید کی۔

ٹرمپ نے مار لاگو چھاپے کو’’چپکے سے حملہ‘‘قرار دیا جہاں سے ان کے بہ قول اہلکار اپنامن چاہا مواد لے گئے ہیں۔ ٹرمپ کے بہ قول ایف بی آئی کےایجنٹوں نے کیمروں کو بند کرنے کا حکم دیا اور کسی کو چھاپا مارکارروائی کے دوران میں کمروں سے گزرنے کی اجازت نہیں دی۔

ٹرمپ نے الزام لگایا کہ ’’وہ (سرکاری اہلکار)اپنی مطلوبہ چیزلے جا سکتے ہیں اور اپنی مطلوبہ چیز ڈال سکتے ہیں‘‘۔انھوں نے مزید کہا کہ ’’ممکن ہےایف بی آئی ان کی رہائش گاہ میں اشیاء لگانے یا وہاں سے ڈبے ضبط کرنے میں کامیاب رہی ہو‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں