شام میں ترکیہ کے حمایت یافتہ جنگجووں کے زیر کنٹرول علاقے پر راکٹ حملے

پانچ بچوں سمیت نو افراد ہلاک، اٹھائیس زخمی ہو گئے، کردوں کا اظہار لا تعلقی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شمالی شام میں راکٹ حملے سے پانچ بچوں سمیت 9 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ یہ راکٹ حملہ شمالی شہر کے الباب میں جمعہ کے روز کیا گیا ہے۔ حملے میں ایک مارکیٹ کو ٹارگٹ بنایا گیا تھا۔

وائٹ ہیلمٹس نام سے کام کرنے والے ایک ریسکیو گروپ کے مطابق اس علاقے کو مسلح گروپوں نے کنٹرول کر رکھا ہے اور نو ہلاکتوں کے علاوہ کم از کم 28 افراد زخمی ہوئے ہیں۔

گذشتہ گیارہ برسوں سے جنگ زدہ شام کو متعدد متحارب گروہوں نے اپنے قبضے میں لے رکھا ہے۔ شمالی شام اس حوالے سے کئی قسم کے قبضوں کی زد میں ہے۔ ہر گروہ نے اپنے کنٹرول کے علاقے کو ایک زون بنا رکھا ہے۔

واضح رہے الباب کو علاقہ صوبہ حلب میں آتا ہے اور اس پر ترکیہ کے حمایت یافتہ جنگجووں کا قبضہ ہے۔ جبکہ اسی صوبے کے دوسرے حصوں پر روسی مدد سے بشار رجیم کا کنٹرول ہے۔

امریکی حمایت یافتہ کرد جنگجو جو ڈیمو کریٹک فورس کے نام سے موجود ہیں، نے دمشق میں قائم حکومت کے ساتھ مذاکرات شروع کر رکھے ہیں اور ان کردوں کا اثر رسوخ شمالی شام میں ہے۔ کردوں کی میڈیا سنٹر کے سربراہ فرہاد شامی کا جمعہ کے روز ہونے والے راکٹ حملوں سے لاتعلقی کا اعلان کیا ہے۔

الباب میں نماز جمعہ کے بعد کردوں نے اعلان کر رکھا تھا کہ وہ ترکیہ کے خلاف احتجاج کریں گے ، تاکہ ترکیہ کی طرف سے حکومت اور اپوزیشن کے درمیان مذاکرات کے حق میں خیالات کی مذمت کی جاسکے۔ لیکن راکٹ حملے کے بعد کردوں نے اپنے احتجاج کی کال واپس لے لی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں