البانیا میں فوجی اڈے پر حملے کے بعد روس کے تین مشتبہ جاسوس گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

البانیا میں روس کے لیے جاسوسی کے شُبے میں تین افراد کوگرفتارکرلیا گیا ہے۔انھوں نے ہفتے کے روز ایک فوجی پلانٹ پر حملہ کیا تھا جس کے بارے میں خیال کیاجاتا ہے کہ یہ ایک کیمیائی ایجنٹ تھا جس کے نتیجے میں اس پلانٹ کے دومحافظ زخمی ہو گئے تھے۔

اس واقعہ کے بعد تین مشتبہ ملزمان، دو روسی اور ایک یوکرینی شہری،کوحراست میں لے لیا گیا ہے جبکہ دونوں زخمی البانوی محافظوں کو اسپتال میں داخل کرایا گیا اور ان کی متاثرہ آنکھوں کا علاج کیا جا رہا ہے۔

ملزمان میں سے ایک 24 سالہ شخص کی شناخت ایم زیڈ کے نام سے ہوئی ہے۔اس کو کیمرے کے ساتھ اس وقت دیکھا گیا جب وہ البانوی قصبے گرامش میں اسلحہ تیار کرنے والے پلانٹ کے احاطہ کی تصاویر لینے کی کوشش کر رہا تھا۔

ٹاپ چینل کی ایک رپورٹ کے مطابق مشتبہ شخص گرامش فیکٹری کی باڑ سے اندرکود گیا تھا اور اس نے اعصابی فالج کا سبب بننے والے ایجنٹ سے سامنے آنے والے محافظوں پر حملہ کردیا تھا۔

البانوی وزیر دفاع نیکو پیلیشی کے حوالے سے بتایا گیا کہ روسی شہری نے جسمانی رد عمل کا اظہار کیا اور اس نے ایک سپرے بھی استعمال کیا جس سے دونوں فوجی زخمی ہو گئے لیکن وہ اس دوران میں پولیس کو خبردار کرنے میں کامیاب ہو گئے۔

فیکٹری کے قریب ایک کار میں 33 سالہ ایک اور روسی کو بھی گرفتار کیا گیا۔اس کی شناخت ایس ٹی کے نام سے ہوئی ہے۔اس کے علاوہ ایک 25 سالہ یوکرینی نوجوان کو گرفتار کیا گیا ہے۔اس کی شناخت ایف اے کے نام سے ہوئی ہے۔

البانوی وزیر اعظم ایدی راما نے کہا کہ ان تینوں پر "جاسوسی کا شبہ" ہے۔انھوں نے جاسوسی کے شبے میں تین افراد کو بے اثر کرنے والے فوجی محافظوں کے کردارکو سراہا ہے اور ان کی بہادری کی تعریف کی ہے۔

وزیردفاع پیلیشی نے مزید کہا کہ یہ ایک ایسا واقعہ ہے جس کو وسیع ترعلاقائی اور سیاسی تناظر میں دیکھنے کی ضرورت ہے۔اسے ایک عام واقعہ قرار نہیں دیا جا سکتا لیکن ہمیں قبل ازوقت کسی نتیجے پر نہیں پہنچنا چاہیے۔

البانوی نیوزچینل ویزیون پلس نے دونوں مشتبہ روسی جاسوسوں کی شناخت سفیتلانا تیموفیوا اور میخائل زورین کے نام سے کی ہے۔آن لائن نیوز میڈیا پولیٹیکو کی رپورٹ کے مطابق یہ پہلا موقع نہیں جب مشتبہ روسی جاسوسوں نے فوجی انٹیلی جنس اکٹھا کرنے یا حملوں کے لیے البانیا میں دراندازی کی کوشش کی ہے۔البانیا 2009 سے معاہدہ شمال اوقیانوس کی تنظیم نیٹو کا رکن ہے۔

گذشتہ سال دو روسی کوکووا فضائی اڈے کے بیرونی احاطہ میں ڈرون لے جاتے ہوئے پکڑے گئے تھے۔دونوں مشتبہ روسی ایجنٹ ان قواعد کے تحت سیاحوں کی حیثیت سے ملک میں داخل ہوئے جو روسیوں کو موسم گرما کی چھٹیوں کی مدت کے لیے ویزے کے بغیربلقان ملک میں داخل ہونے کی اجازت دیتے ہیں۔ویزے کے اس سقم کواب کچھ لوگ ختم کرنے پر زور دے رہے ہیں۔

البانیا روسی حملے کی زد میں یوکرین کی خودمختاری کا مضبوط حامی ہے۔جولائی میں نیٹو کے سربراہ جینزا سٹولٹن برگ کے ساتھ ایک ملاقات میں البانوی وزیراعظم راما نے کہا تھا کہ وہ ’’یوکرین کے ساتھ مکمل یک جہتی کے ساتھ کھڑے ہیں اور بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ سرحدوں کے اندر یوکرین کی خودمختاری اورعلاقائی سالمیت کے لیے ہماری حمایت ہمیشہ کی طرح پختہ عزم کی حامل ہے‘‘۔

البانیا نے سویڈن اورفن لینڈ کی نیٹو کی رکنیت کے لیے درخواست کی سب سے پہلے توثیق کی تھی۔اس اقدام نے اس کی روس کے ساتھ کشیدگی کو بڑھادیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں