افغانستان وطالبان

طالبان کمانڈر کی شکایت کرنے والی خاتون گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

افغانستان میں طالبان حکام نے سابق طالبان کمانڈر پرآبرو ریزی اور تشدد کی شکایت کرنے والی خاتون کو حراست میں لے لیا ہے۔اس کی گرفتاری اس وقت عمل میں لائی گئی جب خاتون نے تنگ آکر پاکستان فرار ہونے کی کوشش کی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ خاتون کو پاکستان جانے کی کوشش کے دوران ایک چیک پوسٹ سے پکڑا گیا ہے۔ اسے واپس کابل منتقل کردیا گیا ہے جہاں اس کے خلاف طالبان کی نام نہاد عدالت میں مقدمہ چلایا جائے گا۔

گذشتہ دو روز کے دوران افغانستان میں ایک خاتون کی ویڈیو سوشل میڈیا پر سامنے آئی تھی جس میں اسے ایک سابق طالبان کمانڈر کے خلاف شکایت کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔ ویڈیو کے سامنے آنے کے بعد طالبان کمانڈر کے خلاف سخت رد عمل سامنے آیا ہے۔

مار پیٹ، عصمت دری اور حراست

ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق، خاتون جس نے اپنے آپ کو صرف اپنے پہلے نام "الھا" سے ظاہر کیا ہے ویڈیو میں رو پڑی۔ اس نے طالبان کی وزارت داخلہ کے سابق ترجمان قاری سعید خوستی کی طرف سے مار پیٹ اور عصمت دری کیے جانے کو بیان کیا۔

اس نے یہ بھی کہا کہ وہ دارالحکومت کابل کے ایک اپارٹمنٹ سے بات کر رہی تھی، جہاں اسے طالبان کے افراد نے اس وقت حراست میں لے لیا جب اس نے اپنی رہائی کی بھیک مانگتے ہوئے ملک سے فرار ہونے کی کوشش کی۔

اس نے رجسٹری میں اپنی شناخت کابل یونیورسٹی میں میڈیکل کی طالبہ اور پچھلی حکومت کی انٹیلی جنس سروس میں ایک جنرل کی بیٹی کے طور پر بھی کی۔

پاکستان فرار ہونے کی کوشش

انہوں نے کہا کہ خوستی نے 6 ماہ قبل اس سے زبردستی شادی کی تھی، جب وہ سرکاری ترجمان تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس نے اپنی بہن کی شادی کسی اور طالبان اہلکار سے کرنے کی کوشش کی، لیکن اس کا خاندان ملک سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا۔

اس نے بتایا کہ میں نے ہمسایہ ملک پاکستان فرار ہونے کی کوشش کی، لیکن طالبان نے اسے ایک سرحدی کراسنگ سے گرفتار کر لیا اور اسے واپس کابل لے آئے، اور اسے وہاں کے ایک اپارٹمنٹ میں بند کر دیا۔

گرفتاری اور سزا

دوسری جانب ویڈیو کلپ سامنے آنے کے ایک دن بعد تحریک طالبان نے اعلان کیا ہےکہ اس نے ’ الھا‘ کو گرفتار کر لیا ہے۔ نام نہاد "طالبان کے زیر انتظام سپریم کورٹ" نے بدھ کو دیر گئے ایک ٹویٹ میں کہا کہ انہیں چیف جسٹس عبدالحکیم حقانی کے حکم پر "ہتک عزت" کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔

اس نے کسی جاری مقدمے کا ذکر نہیں کیا، صرف اتنا کہا کہ اسے "جلد ہی سزا دی جائے گی۔"

خوستی نے بدھ کے روز شائع ہونے والی ٹویٹس میں تصدیق کی کہ اس نے "الہا" سے شادی کی اور پھر اسے طلاق دے دی، لیکن اس نے ان کے ساتھ بدسلوکی کی تردید کی۔

حالیہ مہینوں میں خوستی کو تحریک کے سرکاری ترجمان کے عہدے سے برطرف کر دیا گیا تھا تاہم ان کی نئی ذمہ داری واضح نہیں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں