روس کو دہشت گردی کا پشت پناہ نہ قرار دینا حتمی فیصلہ ہے: واشنگٹن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ماسکو کی جانب سے یوکرین میں اپنی فوجی کارروائیوں کے آغاز کے بعد روس اور امریکا کے کشیدہ تعلقات کے باوجود، وائٹ ہاؤس نے منگل کے روز زور دیا کہ روس کو دہشت گردی کی سرپرستی کرنے والی ریاست کے طور پر نامزد نہ کرنا حتمی فیصلہ ہے۔

وائٹ ہاؤس کی ترجمان کیرن جین پیئر نے منگل کو کہا کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے روس کو دہشت گردی کی سرپرستی کرنے والے ملک کے طور پر نامزد کرنے کے خلاف حتمی فیصلہ کر لیا ہے۔

انہوں نےکہا کہ روس کو دہشت گردی کے ریاستی سرپرست کے طور پر نامزد کرنے سے خوراک کی برآمدات میں تاخیر ہو سکتی ہے اور بحیرہ اسود کے پار سامان کی نقل و حمل کے معاہدوں کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔

اس سے قبل امریکی صدر جو بائیڈن نے وائٹ ہاؤس پہنچنے پر صحافیوں کے مختصر رد عمل کے دوران، روس کو دہشت گردی کی سرپرستی کرنے والا ملک قرار دینے کے خیال کو مسترد کر دیا۔

وائٹ ہاؤس میں پریس بیانات میں جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا روس کو دہشت گردی کے ریاستی سرپرست کے طور پر درجہ بندی کیا جانا چاہیے۔

دوسری جانب کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے امریکی صدر کے روس کو ’دہشت گردی کی سرپرستی کرنے والا ریاست‘ قرار دینے سے انکار کو مثبت قرار دیا۔

کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف
کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف

پیسکوف نے منگل کو ایک پریس بیان میں کہا کہ ’’یہ سوال خود ہی اشتعال انگیز ہے۔ یقیناً یہ اچھی بات ہے کہ امریکی صدر نے اس طرح جواب دیا ہے۔

روسی انتباہ

یہ اس وقت سامنے آیا ہے جب ماسکو نے خبردار کیا تھا کہ یہ اقدام امریکا اور روس کے تعلقات کے خاتمے کا باعث بنے گا۔

روسی وزارت خارجہ کی ترجمان ماریا زاخارووا نے کہا کہ یہ قدم سفارتی تعلقات کو منقطع کرنے کا باعث بن سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کا ملک امریکی موقف میں کسی بھی پیشرفت کے لیے تیار ہے۔

جب کہ ڈیموکریٹک اور ریپبلکن پارٹیوں کے کچھ امریکی قانون ساز کئی ماہ سے روس کو اس فہرست یا درجہ بندی میں شامل کرنے کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں۔ تقریباً ایک ماہ قبل، امریکی سینیٹ نے ایک قرارداد منظور کی تھی جس میں محکمہ خارجہ سے مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ روس کو "دہشت گردی کے سرپرست" کے طور پر تسلیم کرے۔

ماسکو کو دہشت گردی کے ریاستی سرپرست کے طور پر درجہ بندی کرنے کا معاملہ بھی 24 فروری کو اپنی سرزمین میں روسی فوجی کارروائی کے بعد سے یوکرین کے سب سے نمایاں مطالبات میں سے ایک رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں