ملکہ ایلزبتھ دوم کی وفات پرعالمی رہنماؤں کااظہارِ تعزیت اور خراجِ عقیدت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

بکنگھم پیلس کی جانب سے جمعرات کو برطانیہ کی سب سے طویل عرصہ تک حکمران رہنے والی ملکہ ایلزبتھ دوم کی وفات کے اعلان کے ساتھ ہی عالمی رہ نماؤں کے تعزیتی بیانات آنا شروع ہوگئے ہیں اور انھوں نے ملکہ کو ان کے پُروقار شخصی کردار پر خراجِ عقیدت پیش کیا ہے اور ان کی گراں قدر خدمات کو سراہا ہے۔

سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیوگوٹیرس نے اپنے تعزیتی کلمات میں کہا کہ برطانیہ کی طویل عرصے تک حکومت کرنے والی سربراہ مملکت کی حیثیت سے ملکہ ایلزبتھ دوم کو دنیا بھر میں ان کی فضیلت، وقاراور لگن کی وجہ سے بہت سراہا جاتا تھا۔ وہ افریقااور ایشیا کے بہت سے ممالک کی نوآبادی حیثیت ختم کرنے اور دولت مشترکہ کے ارتقا سمیت کئی دہائیوں کی وسیع تبدیلی کے عمل کے دوران میں فعال کردار اداکرتی رہی تھیں۔

انھوں نے کہا کہ ملکہ ایلزبتھ دوم اقوام متحدہ کی اچھی دوست تھیں اور انھوں نے نصف صدی سے زیادہ عرصے کے دوران میں دومرتبہ نیویارک میں واقع ہمارے ہیڈ کوارٹر کا دورہ کیا۔ وہ بہت سے خیراتی اور ماحولیاتی مقاصد کے ساتھ گہری وابستگی رکھتی تھیں اورانھوں نے گلاسگو میں سی او پی 26 موسمیاتی مذاکرات میں شریک مندوبین سے بات چیت کی تھی۔

انھوں نے کہا کہ ’’میں ملکہ ایلزبتھ دوم کو ان کی عوام کے لیےغیرمتزلزل خدمات اور تاحیات لگن پر خراج عقیدت پیش کرنا چاہوں گا۔ دنیا ان کی عقیدت اور قیادت کو طویل عرصے تک یاد رکھے گی‘‘۔

برطانوی وزیراعظم

برطانیہ کی نئی وزیراعظم لیزٹرس نے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا کہ ملکہ ایلزبتھ دوم جدید برطانیہ کی چٹان‘‘تھیں۔

لندن میں ڈاؤننگ اسٹریٹ کے باہر گفتگو کرتے ہوئے نئی کنزرویٹو وزیر اعظم نے کہا کہ ملکہ معظمہ خود میرے اور بہت سے برطانویوں کے لیے ذاتی تحریک رہی ہیں۔

اطالوی وزیر اعظم

اطالوی وزیراعظم ماریو ڈراگھی نے اپنے بیان میں ملکہ ایلزبتھ گذشتہ سترسال میں عالمی تاریخ کی ایک بڑی کھلاڑی تھیں۔ انھوں نے برطانیہ اور دولت مشترکہ کی نمائندگی توازن، دانش مندی، اداروں اور جمہوریت کے احترام کے ساتھ کی۔ وہ اپنے ملک کی سب سے پیاری علامت رہی ہیں اور انھوں نے ہر جگہ احترام، شفقت اور ہمدردی حاصل کی ہے۔انھوں نے بحران کے وقت استحکام کو یقینی بنایا اور مستقل اور گہرے ارتقا میں معاشرے میں روایت کی قدرکوزندہ رکھا۔

انھوں نے مزید کہا کہ ان کی خدمت کا جذبہ، برطانیہ اور دولت مشترکہ کے لیے ان کی لگن اور اتنے طویل عرصے تک جس گہرے وقار کے ساتھ انھوں نے عہدہ سنبھالے رکھا، نسلوں سے اس کی تعریف کی جارہی ہے۔

اسپیکربرطانوی دارالعوام لنڈسے ہوئل

ہم سب کے لیے ملکہ معظمہ ہماری زندگیوں میں مستقل طور پر موجود رہی ہیں۔ وہ خاندان کے ایک فرد کی طرح واقف تھیں۔انھوں نے ہمارے ملک کو پرسکون بنانے میں مستحکم انداز میں اپنے اثر و رسوخ کا استعمال کیا۔ہم میں سے اکثر کو کبھی ایسا وقت معلوم نہیں ہوا جب وہ وہاں نہیں تھی۔ان کی موت نہ صرف شاہی خاندان کے لیے ایک المیہ ہے بلکہ ہم سب کے لیے ایک بڑا اور عظیم نقصان ہے۔

سابق برطانوی وزیراعظم جان میجر

جان میجر نے کہا کہ ہم سب نے اپنے لیے بہت قیمتی شخصیت کوکھو دیا ہے اور جب ہم ماتم کرتے ہیں تو ہمیں شکرگزار ہونا چاہیے کہ ہمیں اتنے طویل عرصے تک تک فرض اور قیادت کی ایسی مثال سے نوازا گیا۔

کینیڈا میں سوگ کا اعلان

کینیڈا کی گورنرجنرل میری سائمن نے ٹویٹر پر برطانوی شاہی خاندان سے تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھر میں کینیڈین ملکہ کے انتقال پر سوگ منائیں گے۔

انھوں نے کہا کہ ہم ملکہ کی وفات پرشاہی خاندان سے گہری تعزیت کا اظہار کرتے ہیں۔آئیے ہم سوگ کی اس گھڑی میں ملکہ معظمہ کی یاد کے احترام میں ایک لمحہ گزاریں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں