چینی لڑاکا طیاروں کی پھر تائیوان کی فضاؤں میں پروازیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چین اور تائیوان کے درمیان مہینوں سے جاری کشیدگی میں اضافہ ہو رہا ہے، اسی تناظر میں تائیوان نے کہا ہے کہ چین کے سترہ جنگی طیاروں نے ایک بار پھر آبنائے تائیوان کو عبور کرتے ہوئے پروازیں کیں۔

تائیوان کی وزارت دفاع نے وضاحت کی کہ ہفتہ کی شام چین کے تینتالیس جنگی طیارے اور نو بحری جنگی جہاز ہفتہ کی شام تائیوان کی سمندری حدود میں دیکھے گئے ہیں جس کے بعد تائیوان کی مسلح افواج نے فضائی اور بحری گشت میں اضافہ کردیا۔

تائیوان نے بتایا کہ اس نے چین کا مقابلہ کرنے کیلئے میزائل ڈیفنس سسٹم تعینات کر دیا ہے۔

تائیوان کی وزارت نے تفصیل بتائی کہ چین کے چار سخوئی ایس یو تھرٹی اور چینگڈو جے ٹین طرز کے چار لڑاکا طیارے اور نو شینیانگ جے سولہ طرز کے طیاروں نے آبنائے تائیوان کو عبور کیا۔

تائیوان کی فضاؤں میں

اینٹی سب میرین ائیر ڈیفنس آئی ڈنٹفکیشن زون میں ایک اینٹی سب مرین طرز کے تیارے نے بھی اڑا اس کے ساتھ ہاربن طرز کا طیارہ بھی محو پرواز تھا۔

یاد رہے گزشتہ کچھ عرصہ سے چین نے تائیوان کے اوپر اپنی پروازوں کو تیز کر دیا ہے۔ ان کارروائیوں کا مقصد نیم خود مختار جزیرے تائیوان کو سخت پیغامات پہنچانا ہے۔

تائیوان سمجھتا ہے کہ اس کی تیئیس ملین آبادی کو بیجنگ سے خود ارادیت اور مستقل آزادی کا حق حاصل ہے۔ بیجنگ تائیوان کا یہ دعویٰ تسلیم نہیں کرتا اور اس جزیرے کو اپنا اٹوٹ انگ قرار دیتا ہے۔

امریکہ کی جانب سے تائیوان کی مدد کے مسلسل تکرار کی جا رہی ہے۔ امریکہ تائیوان کو اسلحہ کے معاہدوں کے ذریعہ بھی تعاون فراہم کر رہا۔ گزشتہ ہفتے ہی امریکہ اور تائیوان کے درمیان 1.1 بلین ڈالر کا معاہدہ ہوا۔ ان ہی وجوہات کی بنا پر چین اور تائیوان کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہو گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں