ٹویٹرکےحصص داران کے ووٹ سے قبل ایلون مسک کی معاہدہ ختم کرنے کی کوشش مسترد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

ٹویٹر نے ایلون مسک کی جانب سے سوشل نیٹ ورک خریدنے کے معاہدے کو منسوخ کرنے کی تیسری کوشش مستردکردی ہے۔اس کے ایک روز بعدکمپنی کے حصص داران (شیئرہولڈرز) 44 ارب ڈالرمالیت کے معاہدے پر ووٹ دینے والے ہیں۔

ایک ریگولیٹری فائلنگ کے مطابق ٹویٹرکے وکلاء نے پیرکوایک خط میں کہا کہ ارب پتی ایلون مسک کی معاہدے سے پھرنے کی کوشش ’’ناجائزاورغلط‘‘ہے اور’’ٹویٹر نے اپنی کسی بھی نمائندگی یا ذمہ داری کی خلاف ورزی نہیں کی ہے‘‘۔ مسک نے کہا ہے کہ ٹویٹر کو کمپنی کے سابق سکیورٹی چیف پیٹر زٹکو کے ساتھ علاحدگی کے معاہدے میں ساڑھے 77 لاکھ ڈالرخرچ کرنے سے پہلے انھیں مطلع کرنا چاہیے تھا۔انھوں نے نرم اورڈھیلی سکیورٹی، رازداری کے مسائل اور’’پلیٹ فارم پربوٹس‘‘کی تعداد کے بارے میں خدشات ظاہرکیے ہیں۔

مسک نے اس سے قبل پلیٹ فارم پر بوٹ اکاؤنٹس کی تعداد کے ساتھ ساتھ کمپنی کی خدمات حاصل کرنے اور لوگوں کو فارغ کرنے کے فیصلوں کے بارے میں خدشات ظاہر کیے ہیں اور دلیل دی ہے کہ خریداری معاہدے کی خلاف ورزیوں سے وہ اپنی پیش کش واپس لے سکتے ہیں۔

اس کے باوجود ٹویٹر کے سرمایہ کاروں کی جانب سے مسک کی بولی قبول کیے جانے کا امکان ہے اور 17 اکتوبر کو ہونے والا عدالتی مقدمہ یہ فیصلہ کرنے کے لیے کہ آیا انھیں اپنی پیش کش کو پورا کرناہوگا یا نہیں، ٹریک پر موجود ہے۔

ویڈبش سکیورٹیز کے تجزیہ کاروں ڈینیل آئیوس اور جان کٹسنگریس نے ایک نوٹ میں لکھا کہ کل متوقع شیئرہولڈرکی منظوری باضابطہ طور پر ڈیلاویئر کورٹس میں مسک اور ٹویٹر کے درمیان گیم آف تھرونز کی جنگ کا مرحلہ طے کرے گی۔اس کا ہماری رائے میں یہ امکان زیادہ ہے کہ اکتوبرکے مقدمے سے قبل کسی نہ کسی قسم کے مذاکرات کا امکان ہے۔

نیویارک میں پیر کو دوپہر12 بج کر 6 منٹ پر ٹویٹرکے حصص کی قیمت 2 فی صد کمی کے ساتھ 41.33 ڈالر رہی۔ اس سال اسٹاک میں 4۰4 فی صد کمی ہوئی ہے۔

زٹکو منگل کو واشنگٹن میں امریکی سینیٹ کی عدلیہ کمیٹی کے سامنے اپنے الزامات کے بارے میں گواہی دینے والے ہیں۔انھیں ٹویٹر کے مقدمے میں بھی گواہی دینے کے لیے طلب کیا گیا ہے۔

ڈیلاویئر چانسری کی جج کیتھالین سینٹ جوڈمیکارمک نے مسک کو ٹویٹرپر’’شدید خامیوں‘‘کے زٹکو کے الزامات کو اپنے قانونی دلائل میں شامل کرنے کی اجازت دے دی ہے جس سے ارب پتی کو ٹویٹرکی جانب سے زٹکو کے بیانات ظاہر کرنے میں ناکامی کے ذریعے حصول پر مادی منفی اثرات پر بحث کرنے کی اجازت مل گئی ہے۔

تاہم میکارمک نے مقدمے کی تاریخ کو پیچھے دھکیلنے کی اپنی کوشش کی تردید کی ہے۔ اس سے وہ وقت محدود ہوسکتا ہے جب مسک کی ٹیم کو الزامات کی تلاش کرنا ہے۔

مسک نے اپریل میں ٹویٹر کوخرید کرنے کا فیصلہ کیا تھا لیکن اس کے بعد سے ٹویٹر کے اسٹاک اور 54.20 ڈالرکے معاہدے کی قیمت کے درمیان پھیلاؤ بڑھ گیا ہے، جس سے ان شکوک و شبہات کا اظہار کیا جارہا ہے کہ آیا یہ سودا لین دین کے عمل سے گزرے گا۔ دریں اثنا، سوشل نیٹ ورک نے اشتہارات فروخت کرنے کے لیے جدوجہد کرتے ہوئے ہائرنگ فریزنافذ کیا اور حصص کو مارکیٹ میں وسیع ترمندی نے بڑھا دیا۔

سان فرانسسکو میں قائم کمپنی نے اسپیم بوٹس پر مسک کے دعووں کی تردید کی ہے۔اس معاہدے میں یہ شق بھی شامل ہے کہ اگرکوئی فریق الگ ہو جاتا ہے تو معاہدہ توڑنے والے فریق کو ایک ارب ڈالر بہ طور تنسیخ فیس ادا کرنا ہوگی۔

بلومبرگ انٹیلی جنس کے قانونی چارہ جوئی کے تجزیہ کار میتھیو شیٹنہلم کا کہنا ہے کہ اگرچہ یہ الزام مسک کے پہلے ہائرنگ اور فائرنگ کے دعووں سے زیادہ مضبوط ہے لیکن صرف ’مادی‘ خلاف ورزیوں سے مسک پیچھے ہٹ سکتے ہیں۔اگرٹویٹراپنی ماضی کی مشق کی تفصیل نہیں دکھا سکتا تو بھی ہمیں شک ہے کہ صرف ساڑھے 77 لاکھ ڈالرکی ادائی سے اس معاہدے کی تنسیخ ہوسکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں